کسی کیخلاف بات کرنا پسند نہیں کرتا شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس دیکھ کر جواب دوں گا ،جہانگیر خان ترین

شاہ محمود قریشی اپنے ضلع اور شہر کے لوگوں کیساتھ بیٹھ کر منصفانہ طریقے سے معاملات حل کریں ،دوسروں پر الزام لگانے سے بہتر تحفظات دور کرنا ہے،عمران خان کو وزیراعظم بنانے ،تحریک انصاف کو برسراقتدار لانے کیلئے جو ہو سکا کروں گا،ان میں سے نہیں جو پارٹی کے معاملات میڈیا پر اچھالے، میں باہر آ کر بھڑکیں نہیں مارتا، پارٹی کے اندر بات کرتا ہوں،لودھراں میں صحافیوں سے گفتگو

جمعہ جون 18:18

کسی کیخلاف بات کرنا پسند نہیں کرتا شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس ..
لودھراں (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 جون2018ء) پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء جہانگیر خان ترین نے کہاہے کہ میں کسی کیخلاف بات کرنا پسند نہیں کرتا شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس دیکھ کر جواب دوں گا لیکن جواب دینے کے قابل کوئی چیز بھی ہو،،تحریک انصاف میں بطور عام کارکن کام کر رہا ہوں اور کرتا رہوں گا، پارٹی کیساتھ ایسے ہی کھڑا ہوں جیسے پہلے کھڑا تھا،،شاہ محمود قریشی اپنے ضلع اور شہر کے لوگوں کیساتھ بیٹھ کر منصفانہ طریقے سے معاملات حل کریں ،دوسروں پر الزام لگانے سے بہتر تحفظات دور کرنا ہے،،عمران خان کو وزیراعظم بنانے ،،تحریک انصاف کو برسراقتدار لانے کیلئے جو ہو سکا کروں گا،ان میں سے نہیں جو پارٹی کے معاملات میڈیا پر اچھالے، میں باہر آ کر بھڑکیں نہیں مارتا، پارٹی کے اندر بات کرتا ہوں۔

(جاری ہے)

لودھراں میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کے رہنماء جہانگیر خان ترین نے شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس کے حوالے سے کہا کہ میں کسی کیخلاف بات کرنا پسند نہیں کرتا، شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس دیکھ کر جواب دوں گا لیکن جواب دینے کے قابل کوئی چیز بھی ہو،،تحریک انصاف میں بطور عام کارکن کام کر رہا ہوں اور کرتا رہوں گا، پارٹی کیساتھ ایسے ہی کھڑا ہوں جیسے پہلے کھڑا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ٹکٹوں کیلئے کوئی دھرنا دینا چاہے تو اس کی مرضی ہے، میرا کوئی ذاتی مفاد نہیں ہے، اصول کی سیاست کرتا رہوں گا۔انہوں نے کہا کہ شاہ محمود قریشی اپنے ضلع اور شہر کے لوگوں کیساتھ بیٹھ کر منصفانہ طریقے سے معاملات حل کریں کیونکہ دوسروں پر الزام لگانے سے بہتر تحفظات دور کرنا ہے۔انہوں نے کہاکہ شاہ محمود قریشی دوسروں پر الزامات لگانے کے بجائے عون چوہدری جیسے کارکنوں کے تحفظات دور کریں۔

جہانگیر ترین نے کہا کہ پی ٹی آئی میں نہ کوئی عہدہ مل سکتا ہے نہ میں کوشش کر رہا ہوں، عمران خان کو وزیراعظم بنانے اور تحریک انصاف کو برسراقتدار لانے کیلئے جو ہو سکا کروں گا۔انہوں نے کہا کہ دھرنے کی سیاست پی ٹی آئی نے شروع کی تھی، اب ہمیں دھرنوں پر برا نہیں ماننا چاہیے، ٹکٹوں کے بارے میں ضروری ہے کہ منصفانہ فیصلے کیے جائیں۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے زیادہ تر نشستوں پر اچھے امیدوار کھڑے کئے ہیں ،میں ان میں سے نہیں جو پارٹی کے معاملات میڈیا پر اچھالے، میں باہر آ کر بھڑکیں نہیں مارتا، پارٹی کے اندر بات کرتا ہوں۔