ملک بھر میں خواتین سمیت معاشرے کے پسے ہوئے طبقات کو پائوں پر کھڑا ہونے کے لیے متحد ہونے کی ضرورت ہے،مومنہ خیال

ین الاقوامی اداروں، پی این سی اے ، رورل سپورٹ پروگرام نیٹ ورک کے تعاون سے اتوار کو ثقافت میلے کا انعقاد کرایا جارہاہے، مختلف طبقہ ہائے زندگی کی نمایاں شخصیات بطور مہمان شریک ہونگی، مینجنگ ڈائریکٹر ’’ثقافت‘‘

جمعہ جون 22:29

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 جون2018ء) مینجنگ ڈائریکٹر ’’ثقافت‘‘ مومنہ خیال نے کہاہے کہ ملک بھر کے ہنرمندوں کو ان کا جائز مقام دلانے ،فن کی قدر کرنے اور خواتین سمیت معاشرے کے پسے ہوئے طبقات کو ان کے پاو،ْں پر کھڑا ہونے کے لیے سب کو متحد ہونے کی ضرورت ہے اس مقصد کے لیے بین الاقوامی اداروں، پی این سی اے ، رورل سپورٹ پروگرام نیٹ ورک کے تعاون سے اتوار کو ثقافت میلے کا انعقاد کرایا جارہاہے جس میں مختلف طبقہ ہائے زندگی کی نمایاں شخصیات بطور مہمان شریک ہونگی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کے روز اسلام آباد کے مقامی ہوٹل میں سندھ یونین کونسل اینڈ کمیونٹی اکنامکس سٹرینتھنگ سپورٹ پروگرام (SUCCESS)کے پروگرام منیجر فضل علی سعدی کے ہمراہ منعقدہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

انہوں نے بتایاکہ ایک روزہ ثقافت میلہ چوبیس جون بروز اتوار (کل) پی این سی اے میں ہوگاجس میں ملک بھرسے ثقافت سے متعلقہ فنکار شرکت کریں گے،میلے کا تھیم’’خواتین کا معیار زندگی بہتر کرنے سے غربت کا خاتمہ‘‘ رکھا گیاہے ، میلہ کے موقع پر ایک سیمینار کا انعقاد ہوگاجس میں ڈی جی پی این سی اے جمال شاہ،ساسی کی سربراہ ڈاکٹر ماریہ سلطان، مس شندانہ خان بطور پینلسٹ شرکت کریں گے جبکہ افتتاحی تقریب کے مہمان خصوصی ڈپٹی میئر سید ذیشان نقوی ہونگے۔

میلہ میں ثقافتی سے متعلقہ پروگرام، کلچرل پروگرام،تھیٹر، سیمینار،علاقائی رقص اور میوزک کنسرٹ کرایاجائیگا جبکہ یہ ایک مکمل فیملی میلہ ہوگا۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے فضل علی سعدی کا کہنا تھاکہ رورل سپورٹ پروگرام نیٹ ورک کے تحت سندھ یونین کونسل اینڈ کمیونٹی اکنامکس سٹرینتھنگ سپورٹ پروگرام (SUCCESS) کے ذریعے سندھ کے 18اضلاع میں حکومت اور غیرملکی اداروں کے تعاون سے غریب اور پسماندہ طبقے کو ترقی دینے کا پروگرام شروع کیا گیاہے جس کے تحت ایک لاکھ مرد اور خواتین کو ہنرمندی کی تربیت،تین لاکھ مستحقین کو بلاسود قرضہ کی فراہمی جبکہ ساٹھ ہزار غربت سے نیچے زندگی گزارنے والے افراد کو نقد امداد بذریعہ گرانٹ دی جارہی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھاکہ غربت کا خاتمہ کسی این جی او ،ڈونر یا اکیلے حکومت کاکام نہیں ہے اس کے لیے سب کو مل کر کوشش کرنا ہوگی۔ایک اور سوال کے جواب میں ڈاکٹر مومنہ خیال کا کہنا تھاکہ اتوار کے روز منعقدہ میلے میں سندھ سے فنکاروں ،دستکاروں کی بڑی تعداد شرکت کررہی ہے جبکہ اس موقع انہیں اپنی مصنوعات کی مارکیٹنگ کے مواقع میسر آئیں گے جس سے ان کی معاشی حالت بہتر کرنے میں مدد ملے گی۔۔۔۔

متعلقہ عنوان :