کبھی خواب میں بھی نہیں سوچا تھا کہ فیفا ورلڈ کپ دیکھنے جا ئو ں گا، احمد رضا

ہمارا خاندان تین نسلوں سے فٹبال سینے کاکام کررہاہے، ٹاس کے لیے کھڑا ہوا تو سب سے ا ٓخر میں تھامیں جب بھی آگے جاکر کھڑا ہوتامجھے کوئی نہ کوئی پیچھے کردیتا، فیفا ورلڈ کپ میں ٹاس کر نے والے 15 سالہ پاکستانی احمد رضا کی گفتگو

ہفتہ جون 16:24

ْسینٹ پیٹرز برگ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 جون2018ء) فیفا ورلڈ کپ میں ٹاس کر نے والے لکوٹ سے تعلق رکھنے والے 15 سالہ احمد رضا نے کہا ہے کہ میں نے کبھی خواب میں بھی نہیں سوچا تھا کہ فیفا ورلڈ کپ دیکھنے جا ئو ں گا، ہمارا خاندان تین نسلوں سے فٹبال سینے کاکام کررہاہے، ٹاس کے لیے کھڑا ہوا تو سب سے ا ٓخر میں تھامیں جب بھی آگے جاکر کھڑا ہوتامجھے کوئی نہ کوئی پیچھے کردیتا۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق احمد رضا نے کہ ہے کہ انہیں معروف مشروب بنانے والی کمپنی نے فٹبال کھیلتے ہوئے دیکھا اور 1500 بچوں میں سے منتخب کرکے لا ہور لے گئے۔ بعد میں مجھے بتایاگیا کہ وہ مجھے روس میں ہونے والے فیفا ورلڈ کپ میں لے کرجائیں گے اور میں برازیل بمقابلہ کوسٹاریکا کے میچ کے دوران ٹاس کے وقت وہاں موجود ہوں گا۔

(جاری ہے)

سینٹ پیٹرز برگ گرانڈ میں داخل ہونے کے احساسات کے حوالے سے احمد رضا نے کہا کہ میں نے اس بارے میں کبھی خواب میں بھی نہیں سوچاتھا کہ میں فیفاورلڈ کپ کا میچ دیکھنے جا ئو ں گا۔

احمد رضا نے کہاکہ فیفا انتظامیہ کاا صول ہے کہ کسی کھلاڑی سے بات نہیں کرنی تاہم اگر کھلاڑی خود بات کرے تو ٹھیک ہے لہذا جب میں ٹاس کے لیے کھڑا ہوا تو سب سے ا ٓخر میں تھامیں جب بھی آگے جاکر کھڑا ہوتامجھے کوئی نہ کوئی پیچھے کردیتا، تاہم اس وقت میری خوشی کی انتہا نہ رہی جب برازیل سے تعلق رکھنے والے میرے پسندیدہ کھلاڑی نیمار میرے برابر آکر کھڑے ہوگئے۔

میں نے ہمت کی اور ان سے ہاتھ ملالیا۔احمد رضا نے کہا ان کے والدشبیر احمد خود سیالکوٹ میں فٹ بال بناتے ہیں اور ان کا خاندان تین نسلوں سے فٹ بال بنانے کاکام کررہا ہے۔ میرے دادا اور دادی بھی فٹبال سیتے تھے شادی کے بعد میرے امی نے بھی فٹبال سینی شروع کردی تاہم اخراجات بڑھنیکی وجہ سے میرے والد نے مزدوری شروع کردی اور رات کو جب وقت ملتاتھا تو وہ فٹبال بھی سیتے تھے۔جب سے میں روس آیاہوں میری والدہ روز فون کرکے مجھے دعائیں دیتی ہیں۔

متعلقہ عنوان :