عرفان اللہ شاہ کا تحریک انصاف کو چھوڑ کر پیپلز پارٹی میں شمولیت کا اعلان

ہفتہ جون 20:27

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 جون2018ء) تحریک انصاف کے ریجنل سینئرنائب صدراخونزادہ عرفان اللہ شاہ نے ٹکٹ نہ ملنے پرپارٹی کوخیربادکہتے ہوئے پیپلزپارٹی میں شمولیت اختیارکرلی ،پیپلزپارٹی نے بھی انہیں قومی اسمبلی کی نشست این اے 31پرالیکشن لڑنے کیلئے ٹکٹ جاری کردیا۔یہ اعلانات گزشتہ روزپشاورپریس کلب میں پریس کانفرنس کے دوران کئے گئے اس موقع پرپیپلزپارٹی کیسابق صوبائی وزیر ظاہر علی شاہ،سابق ایم پی اے ضیاء اللہ آفریدی اور ڈسٹرکٹ پشاور کے صدر ذوالفقار افغانی اوردیگرقائدین بھی موجودتھے۔

پریس کانفرنس کے دوران تحریک انصاف کے ریجنل سینئرنائب صدراخونزادہ عرفان اللہ نے ساتھیوں سمیت پی پی پی میں شمولیت کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ تحریک انصاف نے خیبرپختونخواکے عوام کودھوکہ دیاانہوںنے جودعوے کئے تھے وہ سب کے سب جھوٹ پرمبنی تھے۔

(جاری ہے)

تبدیلی کانعرہ لگایالیکن پانچ سالوں میں کوئی تبدیلی نہیں لائے اورملک میں انقلاب لانے کیلئے دیرینہ کارکنوں کوٹکٹ دینے کی بجائے دیگرپارٹیوں سے نکالے گئے لوگوں کوٹکٹس جاری کردئیے ہیں۔

انہوںنے کہاکہ اب انہیں احساس ہوگیاکہ تحریک انصاف کاجومشن ہے وہ ان لوگوں کے ذریعے پورانہیں ہوسکتاہے یہی وجہ ہے کہ انہوںنے تحریک انصاف سے راہیں جداکرکے پیپلزپارٹی میں شمولیت اختیارکرلی کیونکہ پی پی پی ایک سوچ اورنظریہ کانام ہے۔اس موقع پرظاہرعلی شاہ نے کہاکہ پشاورہماراشہرہے لیکن باہرسے آئے لوگوں نے اسے یرغمال بنایاہواہے لیکن اب پشاورکے عوام بیدارہوچکے ہیں اوروہ آئندہ انتخابات میں تبدیلی کے جھوٹے دعوے کرنے والی اس پارٹی کاوجودیہاں سے ختم کردینگے۔

انہوںنے تحریک انصاف کی سابقہ صوبائی حکومت نے صوبے میں کوئی بڑامنصوبہ مکمل نہیں کیااوربی آرٹی منصوبے کیلئے پورے شہر کو بربادکردیا ،ہمیں ہرگز نیا پشاور نہیں چاہیے بلکہ ہمیں اپناپشاورشہرچاہیے۔انہوںنے کہاکہ پی ٹی آئی نے جتنی کرپشن کی ہے اس کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی اوراگرآئندہ سال ڈیڑھ سال میں نیب کیسزشروع ہونگے توان میں سب سے زیادہ کیسزتحریک انصاف کے ہونگے۔

ظاہرشاہ کاکہناتھاکہ پی ٹی آئی والے جنہیں چور کہتے تھے اب انہیں ٹکٹ دئیے ہم حیران ہے کہ تحریک انصاف میں شامل ہوکرکیسے یہ لوگ کرپشن سے پاک ہوجاتے ہیں۔انہوں نے اے این پی پربھی شدیدتنقیدکرتے ہوئے یہ لوگ کہتے ہیں کہ باچاخانی پکاردہ انہیں خداکاخوف کرناچاہیے وہ ایک اصول پسند اورنظریاتی لوگ تھے لیکن یہ پچھلے دورمیں ان لوگوں نے ایزی لوڈ کے جس کلچر کو فروغ دیاہے وہ یہ باچاخانی نہیں جس کوآپ لوگ سمجھ رہے ہیں۔

انہوںنے کہاکہ عوامی نیشنل پارٹی اورجے یوآئی نے اعلان کے باجوودمالاکنڈمیں ہمارے امیدوارکے مقابلے میں اپنے امیدوارکھڑے کرکے وعدہ خلافی کی ہے اب کسی بھی صورت اس بار اے این پی کیساتھ حکومت کیلئے اتحاد نہیں کرینگے۔انہوںنے کہاکہ الیکشن انتظامیہ کے واضح اصولوں کے باوجوددیگرپارٹی کی جانب سے طے کردہ سائزکے برعکس بینرزاورپوسٹرزلگائے ہیں اس لئے انتظامیہ آئندہ دودنوں کے اندراس کے خلاف کارروائی کرے بصورت دیگرپیپلزپارٹی کے کارکن خوداس کوہٹانے کیلئے نکلیں گے۔

اس موقع پرذوالفقارافغانی نے کہاکہ پارٹی قیادت کے فیصلے کے مطابق عرفان اللہ شاہ کواین اے 31کاٹکٹ دیاگیاہے اوراس حلقے سے اب ضیاء اللہ آفریدی کی بجائے عرفان اللہ شاہ قومی اسمبلی کی نشست پرانتخاب لڑینگے۔پریس کانفرنس کے دوران ضیاء آفریدی نے بھی نشست سے دستبرداری کااعلان کیا۔