سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلز میں آتشزدگی کی وجوہات کے تعین اور مارگلہ ہلز کے تحفظ کے لیے وفاقی محتسب کی سربراہی میں کمیشن تشکیل دیدیا

پیر جون 18:52

سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلز میں آتشزدگی کی وجوہات کے تعین اور مارگلہ ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 جون2018ء) سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلز میں آتشزدگی کی وجوہات کے تعین اور مارگلہ ہلز کے تحفظ کے لیے وفاقی محتسب کی سربراہی میں کمیشن تشکیل دیدیا ہے عدالت نے کمیشن کو 15 روز میں اپنی تجاویز عدالت کو پیش کرنے کا حکم بھی دیدیا ہے کمیشن کے ممبران میں درخوست گزار روئیداد خان ڈپٹی اٹارنی جنرل، سی ڈی اور میونسپل کارپوریشن کے نمائندے بھی شامل ہونگے۔

(جاری ہے)

پیر کے روز مارگلہ کے پہاڑوں پر آتشزدگی سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کی، سماعت کے آغاز پر چیف جسٹس نے عدالت میں موجود حکام سے استفسار کیا کہ تین دن تک جنگلات میں آگ لگی رہی، سی ڈی اے کے پاس مارگلہ ہلز میں آگ بجھانے کے آلات نہیں تھی جس پر سی ڈی اے حکام نے بتایا کہ آپکی بات درست ہے ہمارے پاس آگ بجھانے کے آلات نہیں ہیں، چیف جسٹس نے کہا کہ انکوائری کروائیں مارگلہ ہلز پر آگ کیسے لگی، اگر آگ بجھانے کے آلات نہیں تو خرید لیں، جس پر سی ڈی اے حکام کا کہنا تھا کہ آلات خریدنے کے لیے فنڈز مختص ہونے ہیں، فنڈز مختص ہونے کے بعد آلات خرید لیں گے،،چیف جسٹس نے کہا کہ ڈیزاسٹرمنیجمنٹ نے 40ارب لگا کر بلاکوٹ میں صرف ایک سڑک بنائی، سی ڈی اے حکام کا کہنا تھا کہ جولائی کے تیسرے ہفتے میں آلات خریدنے کے لیے فنڈز مل جائیں گے، چیف جسٹس نے کہا کہ کیوں نہ مارگلہ ہلز کے تحفظ کے لیے کمیشن تشکیل دیدیں، کمیشن تیز رفتاری سے کام کرے اور رپورٹ پیش کرے، بعد ازاں عدالت نے کمیشن تشکیل دیتے ہوئے کیس کی سماعت دو ہفتوں کے لیے ملتوی کردی اور کمیشن کو پندرہ روز میں اپنی رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیدیا