لاہور ہائیکورٹ نے قصور میں عدلیہ مخالف احتجاج اور ریلی نکالنے پر توہین عدالت کی درخواست پر کارروائی مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا

پیر جون 18:52

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 جون2018ء) لاہور ہائیکورٹ نے قصور میں عدلیہ مخالف احتجاج اور ریلی نکالنے پر توہین عدالت کی درخواست پر کارروائی مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔

(جاری ہے)

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے قصور بار کے صدر نسیم مرزا کی درخواست پر سماعت کی درخواست گزار کے وکلا نے بتایا کہ 13 اپریل کو قصور میں عدلیہ مخالف ریلی نکالی گئی جس میں نہ صرف عدلیہ تقاریر کی گئیں بلکہ سپریم کورٹ کے ججز کے بارے میں توہین آمیز زبان استعمال کی گئی۔

سماعت کے دوران تمام چھ ملزموں نے غیر مشروط معافی مانگی۔ ملزموں کے وکلا نے حتمی دلائل بھی دیئے۔ درخواست گزار کے مطابق پاکستان کی تاریخ میں عدلیہ کیلئے ایسے الفاظ استعمال نہیں کیے گئے اس لیے ملزموں کو کڑی سزا ملنی چاہیے ۔ لاہور ہائیکورٹ کے فل بنچ نے دلائل مکمل ہونے پر مسلم لیگ (ن) کے سابق ارکان اسمبلی سمیت مقامی رہنماؤں کیخلاف توہین عدالت درخواست پر فیصلہ 29 جون تک محفوظ کر لیا۔