شیرازی برادران کی پیپلز پارٹی میں شمولیت کے بعد پی پی کے مزید راستے صاف کرنے کی خاطر آزاد امیدواروں سے جوڑ توڑ شروع

پیر جون 22:29

سجاول (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 جون2018ء) شیرازی برادران کی پاکستان پیپلز پارٹی میں شمولیت کے بعد پی پی کے مزید راستے صاف کرنے کی خاطر آزاد امیدواروں کی ہمدردیاں حاصل کرنے کیلئے سجاول اور ٹھٹھہ ضلع میں جوڑ توڑ کا سلسلہ شروع ہوچکا ہے۔ سجاول اور ٹھٹھہ میں پی پی کو مزید طاقتور بنانے کیلئے امیر البحر ٹرسٹ کے چیئرمین علی میر ملاح کی جانب سے صوبائی حلقہ پی ایس 78 کے پی پی امیدوار علی حسن زرداری سمیت پی پی کے تمام نامزد امیدواروں و پی پی رہنماوں کے اعزاز میں ظہرانہ دے کر سجاول میں ملاح پیٹرول پمپ پر پروقار تقریب کا انعقاد کیا گیا۔

تقریب میں علی حسن زرداری نے پارٹی رہنماوں کے ہمراہ پہنچ کر امیرالبحر ٹرسٹ کے چیئرمین کو ہر ممکن سہکار کی خاطری کرانے بعد امیرالبحر ٹرسٹ سندھ کی جانب سے نامزد کیئے گئے اپنے امیدواروں کو پی پی امیدواروں کہ حق میں دستبردار ہونے کی گذارش کی۔

(جاری ہے)

امیرالبحر ٹرسٹ تنظیم کے چیئرمین علی میر ملاح نے اپنے نامزد تین امیدواروں پی ایس 75 پر عثمان علی میر ملاح،پی ایس 76 پر سردار انور ملاح پی ایس 78 پر علی حسن زرداری مقابلہ میں کھڑے امیدوار حاجی ذاکر کلانتری کو دستبردار ہونے کا اعلان کیا جبکہ آجیانہ دعوت میں پی پی ضلع سجاول کے صدر محمد علی ملکانی،پی پی ٹھٹھ کے صدر صادق علی میمن،،ریاض شاہ شیرازی و دیگر نے شرکت کی۔

سابق ایم پی اے سید شفیق احمد بخاری نے شیرازیوں کی پی پی میں شمولیت پر سخت تحفظات کا اظہار کرتے کہاکہ میں اب لوٹوں کو ووٹ نہیں دونگا۔ سجاول میں پی پی کی کوشش ہے کہ تمام حلقہ پر نامزدگی فارم جمع کرانے والے امیدوار دستبردار ہوں لیکن شاید اب مزید ایسی صورتحال نہ ہو۔ تاحال حلقہ این اے 231 پر آزاد امیدوار عبدالرحمن ملاح پی ایس 75 پر امیدوار روشن بانو کھٹی،نجف علی لغاری پی ایس 76 پر نصیر احمد ملاح،بابو جمن کھٹی اور جے یو آئی کہ امیدواروں کی جانب سے الیکشن کی تیاریاں زور شور سے جاری ہیں۔ مزید صورتحال 30 جون کو نامزد امیدواروں کی دستبرداری کے بعد فائنل لسٹ جاری ہونے کے بعد ہی پتا چلے گا کہ کون سے امیدواروں کا الیکشن میدان میں اصل مقابلہ ہوتا ہے۔