مظفرآباد ‘دچھور فقیراں سے دوشیزہ کے اغواء کو 15 روز بیت گئے، گڑھی دوپٹہ پولیس بازیابی میں ناکام

منگل جون 16:01

مظفرآباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 جون2018ء) دچھور فقیراں، دوشیزہ کے اغواء کو 15 روز بیت گئے، گڑھی دوپٹہ پولیس بازیابی میں مکمل ناکام، ورثاء کی نشاندہی پر پولیس کی ورثاء کو گالیاں، دھمکیاں، بااثرگروپ کی ایماء پر پولیس کارروائی نہیں کر رہی، چیف سیکرٹری، آئی جی پولیس نوٹس لیکر کارروائی کریں، اغواء شدہ لڑکی ن کے ماموں عبدالجلیل نے گزشتہ روز میڈیا کو بتایا کہ 24 رمضان کو میری بھانجی مسماة ن کو صابر ولد عبدالمجید نے ایک بااثرگروہ کیساتھ ملکر اغوا کرلیا، جبکہ صابر میری بھانجی مسماة ن کا رضائی بھائی بھی ہے، ہم نے وقوعہ کے بارے میں گڑھی دوپٹہ پولیس میں مقدمہ درج کرایا مگر پولیس بازیابی میں مسلسل سست روی اور ٹال مٹول کی پالیسی پر گامزن رہی بالاخر ہمیں اپنے ذرائع سے خبر ملی کہ لڑکی چناری کینواحی علاقے گڑمنڈہ کہواٹ میں ہے ہم چار افراد تھانہ پولیس چناری کو اطلاع دیکر مذکورہ علاقے میں پہنچ گئے، وہاں پر مقامی لوگوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ لڑکی اور اس کے ہمراہ دو لڑکے اسی گاوں میں اپنے رشتہ داروں کے ہاں رہائش پذیر ہیں، ہم نے گڑھی دوپٹہ پولیس کو اطلاع دی، گڑھی دوپٹہ پولیس چناری پولیس کو ساتھ لیکر موقع پر ضرور گئی مگر وہاں مقامی لوگوں سے پوچھ گچھ اور چھاپہ مار کر لڑکی بازیابی کی بجائے ہمیں گالیاں دینا شروع کردیں کہ آپ ادھر کیوں آئے ہو، اور پولیس بغیر کارروائی کے واپس آگئی، گڑھی دوپٹہ پولیس ملزمان کے بااثر گروہ کی ایما پر کوئی کارروائی نہیں کررہی اور الٹا ہمیں ڈرا دھمکا رہی ہے، ملزمان کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے کہ وہ جو مرضی اپنی شریعت اور قانون بنا لیں، اس لیے ہم چیف سیکرٹری، آئی جی پولیس سے اپیل کرتے ہیں کہ ہمیں انصاف دلایا جائے اور مسماة ن کو اغواء کاروں سے بازیاب کرایا جائے، کیونکہ مسماة ن کا رضائی بہن بھائی ہونیکی وجہ سے کسی صورت صابر سے نکاح نہیں ہوسکتا۔

متعلقہ عنوان :