وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی محمد یوسف شیخ نے مون سون 2018ء کی شجرکاری کو مؤثر بنانے کی ہدایت

مون سون شجرکاری سیزن کے دوران سندھ حکومت کی بھرپور معاونت کی جائے ، ہم اس مرتبہ شجرکاری مہم شایان شان طریقہ سے کرنا چاہتے ہیں ،گرین پاکستان پروگرام کے تحت اعلیٰ تعلیمی اداروں میں شجرکاری مہم شروع کی جائے گی ،وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی محمد یوسف شیخ

منگل جون 20:26

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 جون2018ء) وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی محمد یوسف شیخ نے مون سون 2018ء کی شجرکاری کو مؤثر بنانے پر زور دیا ہے۔ وفاقی وزیر نے مون سون 2018ء کی شجرکاری مہم کو مؤثر بنانے کی منصوبہ بندی کے سلسلہ میں وزارت موسمیاتی تبدیلی کے اعلیٰ احکام کے ساتھ ایک اجلاس میں ہدایت کی ہے کہ مون سون شجرکاری سیزن کے دوران سندھ حکومت کی بھرپور معاونت کی جائے اور اس ضمن میں سندھ حکومت سے پوچھا جائے اور اگر ضرورت پیش آئے تو بھرپور معاونت کی جائے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اس مرتبہ شجرکاری مہم شایان شان طریقہ سے کرنا چاہتے ہیں اور اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ صوبائی وزراء اور سیکرٹریز کی وساعت سے شجرکاری مہم کا آغاز کیا جائے۔ گرین پاکستان پروگرام کے تحت سندھ کے اعلیٰ تعلیمی اداروں میں شجرکاری مہم شروع کی جائے گی اور اس کا آغاز خیرپور کی شاہ عبداللطیف یونیورسٹی اور شہید بینظیر بھٹو یونیورسٹی لاڑکانہ سے کیا جائے گا۔

(جاری ہے)

گرین پاکستان پروگرام کے نیشنل پراجیکٹ ڈائریکٹر ابراہیم نے وفاقی وزیر کو بتایا کہ گرین پاکستان پروگرام کے تحت کراچی کے نیم شہری علاقوں میں ڈیڑھ لاکھ پودے لگائے جائیں گے۔ وفاقی وزیر موسمیاتی تبدیلی محمد یوسف شیخ نے واضح کیا کہ وزارت کے ان اقدامات سے صوبہ سندھ میں گرمی کی شدید لہر کے اثرات میں کمی لانے میں مدد ملے گی۔ وفاقی وزیر کراچی میں 17 جولائی کو آب و ہوا کی تبدیلی اور واٹر مینجمنٹ کے عنوان سے منعقد ہونے والی سالانہ کانفرنس کے مہمان خصوصی بھی ہوں گے۔

اس کانفرنس کا اہتمام نیشنل فورم فارانیوائرنمنٹ ، اور ہیلتھ نے کیا ہے۔ وفاقی وزیر اس سالانہ کانفرنس کے دوران دیگر منعقدہ سرگرمیوں کا دورہ بھی کریں گے۔ اجلاس میں وفاقی سیکرٹری برائے موسمیاتی تبدیلی خضرحیات، ایڈیشنل سیکرٹری شکیل اعوان، انسپکٹر جنرل جنگلات سید محمود ناصر اور گرین پاکستان پروگرام کے نیشنل پراجیکٹ ڈائریکٹر ابراہیم نے بھی شرکت کی۔