پیپلزپارٹی قبائلی اضلاع کے رہنمائوں کا عام انتخابات سے دو ماہ بعد فاٹا کیلئے خیبر پختونخوا اسمبلی میں نشستوں کیلئے انتخابات کرانے اور عوام کو ٹیکسز میں پچاس سال تک چھوٹ دینے کا مطالبہ

منگل جون 21:55

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 جون2018ء) پاکستان پیپلزپارٹی قبائلی اضلاع کے رہنمائوں نے عام انتخابات سے دو ماہ بعد فاٹا کیلئے خیبر پختونخوا اسمبلی میں نشستوں کیلئے انتخابات کرانے اورقبائلی عوام کو ٹیکسز میں پچاس سال تک چھوٹ دینے کا مطالبہ کیا ہے ۔۔پشاور پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پی پی قبائلی اضلاع کے رہنماء واین اے 46 امیدوار ساجدحسین طوری، جنرل سیکرٹری ملک جنگریز خان مہمند،سیکرٹری اطلاعات غلام خان وزیر ، ، این اے 42 کے امیدوار ملک اسرائیل صافی ،ملک افضل حسین اورسید جلال حسین نے کہاکہ فاٹا ریفامزبل کو قومی اسمبلی اورسینیٹ سے منظوری کرانے میں پیپلز پارٹی نے حکومت اوردیگر سیاسی جماعتوں کا بھرپور ساتھ دیا، پیپلزپارٹی کے قائدین ذوالفقار علی بھٹو،، بینظیر بھٹو ، سابق صدر پاکستان اور پارٹی کے شریک چیئر مین آصف زرداری اور بلاول بھٹو زرداری سمیت پی پی کے قائدین اور کارکنوں نے نہ صرف قبائلی عوام کو ان کے حقوق کیلئے عملی جدوجہد کی بلکہ ہمیشہ قبائلی عوام کیساتھ ہر معاملے میں ہمدردی کی اور ان کاساتھ دیا ، ذوالفقار علی بھٹو نے فاٹا عوام کو شناختی کارڈزاورووٹ ڈالنے کا حق دیا جبکہ پیپلز پارٹی کی سابق دور حکومت میں پہلی بار امیدواروں کوسیاسی بنیادوں پر انتخابات کرانے کا حق بھی مل گیا، اب بھی ہم فاٹا ریفارمز کو خوش آئند قرار دیتے ہیں تاہم اصلاحات کے بعد فاٹا میں صوبائی اسمبلی کے انتخابات اگلے ساتھ کرانے پر تحفظات کا اظہارکرتے ہیں کیونکہ قبائلی اضلاع کو خیبر پختونخوا اسمبلی میں ایک سال کی تاخیر سے نمائندگی دینے انہیں اپنے بنیادی حقوق سے محروم رکھنے کا مترادف ہے ،نگران وزیر اعظم پاکستان اورچیف الیکشن کمشنر کو چاہیے کہ 25 جولائی کے انتخابات ہی میں فاٹا کو خیبر پختونخوا اسمبلی میں نشستوں پر انتخابات کرانے کیلئے اقدامات کرے اگر پھر بھی حکومت اور الیکشن کمیشن یہ تاخیر چاہتی ہے تو اس کا دورانیہ کم کرکے دوماہ بعد خیبر پختونخوا اسمبلی میں فاٹا کی نشستوں پر الیکشن کرائے کیونکہ ایک سال کا دورانیہ زیادہ ہے جبکہ 25 ء جولائی کے انتخابات اورایک سال بعد انتخابات میں منتخب نمائندوںکے دورانیے میں واضح فرق ہوگا اور سب سے زیادہ پسماندہ رہنے والے قبائلی علاقوں میں ترقیاتی کاموں کا عمل بھی متاثر ہوگا ۔

(جاری ہے)

پیپلز پارٹی چاہتی ہے کہ قبائلی اضلاع کے عوام کسی بھی حق سے محروم نہ ہوچاہے وہ ترقی کا عمل ہو یا سیاسی عمل ہو۔۔پیپلز پارٹی اقتدار میں آکر پہلے کی طرح قبائلی اضلاع میں ترقیاتی کاموں کا عمل جاری رکھے گی اور ان کے تمام حقوق کا تحفظ کریگی۔