پشاور، عالمی ادارہ برائے صحت کے معیار کے مطابق مریضوں کو محفوظ انتقال خون یقینی بنایا جائے، اکبرجان مروت

ریجنل بلڈ سنٹرکاقیام 2016 میںعمل میں لایاگیا ہے جو صوبے کے تین بڑے ہسپتالوں لیڈی ریڈنگ،خیبرٹیچنگ ، حیات آبادمیڈیکل کمپلیکس ،کڈنی سنٹر،سٹی ہسپتال اورمیٹرنٹی ہوم پشاورکو خون فراہم کررہی ہے،خیبرپختونخوا کے نگران وزیر برائے صحت ا

منگل جون 21:58

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 جون2018ء) خیبرپختونخوا کے نگران وزیر برائے صحت اکبرجان مروت نے صوبے میں مریضوں کو محفوظ انتقال خون پر زوردیتے ہوئے متعلقہ حکام کو ہدایت کی ہے کہ عالمی ادارہ برائے صحت کے معیار کے مطابق مریضوں کو محفوظ انتقال خون یقینی بنایا جائے۔ یہ ہدایت انہوںنے ریجنل بلڈ سنٹر پشاور کے دورے کے موقع پر جاری کی۔ نگران وزیر نے ریجنل بلڈسنٹر کے مختلف شعبوں کا معائنہ کیا ۔

اس موقع پر ریجنل منیجر ڈاکٹر صباء نے نگران وزیر صحت کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ ریجنل بلڈ سنٹرکاقیام 2016 میںعمل میں لایاگیا ہے جو صوبے کے تین بڑے ہسپتالوں لیڈی ریڈنگ،خیبرٹیچنگ ، حیات آبادمیڈیکل کمپلیکس ،کڈنی سنٹر،سٹی ہسپتال اورمیٹرنٹی ہوم پشاورکو خون فراہم کررہی ہے۔

(جاری ہے)

اس کے علاوہ ڈی آئی خان ،،سوات اور ایبٹ آباد ریجنل سنٹرزپربھی کام جاری ہے۔

جنور ی 2017 سے مئی 2018 تک 24 ہزار سے زائد بلڈ بیگز مریضوں کو فراہم کی جاچکی ہے۔نگران وزیر صحت نے بلڈ سنٹر کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ پشاور کے علاوہ صوبے کے دوردراز علاقوں میںبھی محفوظ انتقال خون یقینی بنایا جائے ۔وزیر صحت نے صوبے میں پرائیویٹ بلڈسنٹر ز پر بھی کڑی نظر رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہاکہ عوام کی صحت سے کھیلنے کی ہرگز اجازت نہیں دی جائیگی۔

وزیرصحت نے نگران حکومت کی طرف سے ریجنل بلڈ سنٹر کو ہرقسم کے تعاون کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہاکہ عوام کو صحت کی بہترین سہولیات فراہم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہوتی ہے۔انہوںنے کہا کہ نگران وزیر اعلیٰ جسٹس (ر) دوست محمد خان نے واضح احکامات جاری کیے ہیں کہ عوام کو صحت کی بہترین سہولیات فراہم کرنے میں کسی قسم کی غفلت برداشت نہیں کی جائیگی۔