قوم فاقہ کشی پرمجبور، ایرانی رجیم کی شام پر تیل کی نوازشات،جنگجوئوں کوسپورٹ بھی فراہم

ایران کی شام کو 60 ڈالر فی بیرل سے بھی کم قیمت میں تیل کی فروخت،سبسڈی اپنی عوام کو دی جانی چاہیے تھی،مبصرین

بدھ جون 12:06

تہران(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) ایران میں مہنگائی اور بے روزگاری سے تنگ عوام معاشی استحصال کے خلاف سراپا احتجاج ہیں اور دوسری طرف ایرانی حکومت شام میں اسد رجیم کو بچانے کے لیے انتہائی کم قیمت پر اسے تیل فراہم کرنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق ایران نے گذشتہ سال کے 315 ایام میں شام کو 20 کروڑ 80 لاکھ ڈالر کا تیل فروخت کیا، یوں دمشق کو 60 ڈالر فی بیرل کے حساب سے تیل فروخت کیا گیا۔

رپورٹ کے مطابق ایران نے گذشتہ ایک سال کے دوران اسد رجیم کو 47 لاکھ 31 ہزار 466 ٹینکر تیل فراہم کیا اور یہ تیل پانچ مراحل میں شام سے دمشق پہنچایا گیا۔۔ٹوئٹر پر پوسٹ ایک بیان اور تصایر میں ایرانی آئل ٹینکروں کو شام جاتے دکھایا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ بحری جہاز کا عملہ شام کے قریب پہنچتے ہی ’’اے آئی ایس ‘‘بند کردیتا تھا۔

(جاری ہے)

ایرانی رجیم کی جانب سے شام کو کم نرخوں پر تیل کی فراہمی کی خبر ایک ایسے وقت میں آئی ہے جب دوسری جانب ایران میں مہنگائی،، بے روزگاری اور معاشی استحصال کے خلاف عوام سراپا احتجاج ہیں۔

مبصرین کا کہنا تھا کہ ایرانی حکومت کو جو سبسڈی شام کو فراہم کئے جانے والے تیل پر فراہم کی جا رہی ہے وہ اپنے عوام کو دی جانی چاہیے تھی تاکہ ان کے معاشی حالات کو بہتر بنایا جاسکتا۔۔ایران شام کو نہ صرف تیل فراہم کررہا ہے کہ اسد رجیم کے اقتدار کو بچانے کے لیے 2012ء سے پاسداران انقلاب اور دیگر جنگجوؤں کی مدد دمشق کو بچانے کے لیے کوشاں ہے۔ ایک اندازے کے مطابق شام میں ایرانی جنگجوؤں کی تعداد 70ہزار سے زائدہے۔