انتخابات میں ملکی تاریخ کے مہنگے ترین بیلٹ پیپرز استعمال ہوں گے

21 کروڑ بیلٹ پیپرز کی چھپائی پر 2 ارب روپے سے زائد خرچ آئے گا الیکشن کمیشن نے بیلٹ پیپرز کی چھپائی کیلئے ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر اور ریٹرننگ افسران سے متعلقہ حلقوں کے بیلٹ پیپرز کی تعداد مانگ لی

بدھ جون 14:08

انتخابات میں ملکی تاریخ کے مہنگے ترین بیلٹ پیپرز استعمال ہوں گے
ْ اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) 25 جولائی 2018 کو ہونے والے عام انتخابات میں ملکی تاریخ کے مہنگے ترین بیلٹ پیپرز استعمال ہوں گے جس کی خاصیت اس پر واٹر مارک کی موجودگی ہے۔۔الیکشن کمیشن نے انتخابات میں شفافیت برقرار رکھنے کیلئے بیلٹ پیپرز کے لیے کاغذ بیرون ملک سے درآمد کیا اور پہلی مرتبہ بیلٹ پیپرز پر واٹر مارک دکھائی دے گا۔

21 کروڑ بیلٹ پیپرز کی چھپائی پر 2 ارب روپے سے زائد خرچ آئیگا اور یہ بیلٹ پیپرز ملکی تاریخ کے مہنگے ترین بیلٹ پیپرز ہوں گے۔

(جاری ہے)

الیکشن کمیشن نے بیلٹ پیپرز کی چھپائی کے لیے ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر اور ریٹرننگ افسران سے متعلقہ حلقوں کے بیلٹ پیپرز کی تعداد مانگ لی۔ذرائع کے مطابق الیکشن کمیشن نے تمام ڈی آر او اور آر اوز کو اپنے حلقوں کے ووٹرز کی تعداد 30 جون تک جمع کرانے کی ہدایت کی ہے۔

ذرائع کے مطابق بیلٹ پیپرز راؤنڈ فیگر میں چھاپے جائیں گے، مثلاً کسی بھی پولنگ اسٹیشن پر 1201 ووٹرز ہونے کی صورت میں 1300 بیلٹ پیپرز چھاپے جائیں گے۔۔الیکشن کمیشن کے مطابق یکم جولائی سے اسلام آباد ،ْ لاہور اور کراچی کی پرنٹنگ پریس بیلٹ پیپرز کی چھپائی کا آغاز کریں گی اور یہ عمل فوج کی نگرانی میں ہوگا۔