پاکستانی کھلاڑیوں کو ویزا نہ دینے پر بھارت سے ورلڈ جونیئر اسکواش کی میزبانی واپس لی جائے ، جہانگیر خان

بین الاقوامی سطح پر میزبانی کے کچھ تقاضے ہوتے ہیں، سیاست اور کھیل کو ایک ترازو میں نہیں تولنا چاہیے ، انٹرویو

بدھ جون 15:00

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) پاکستان کے لئے چھ ورلڈ اوپن اور 10برٹش اوپن اسکواش کے ٹائٹل جیتنے والے اسکواش لیجنڈ جہانگیر خان نے کہاہے کہ بھارت کی جانب سے پاکستانی ٹیم کو ورلڈ جونئیر اسکواش ایونٹ کے لئے ویزے جا ری کرنے سے انکار کرنا انتہائی افسوس ناک ہے۔ایک انٹرویومیں اسکواش لیجنڈ نے موقف اختیار کیا کہ ایسا پہلی بار نہیں ہوا کہ بھارت نے یہ روش اختیار کی ہے ماضی میں بھی بھارت ایسا کر چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کئی بار ایسا ہوا کہ کھلاریوں کو ویزے دیے گئے اور کوچز کو انکار کر دیا گیا، ایسا نہیں ہونا چاہیے۔انہوںنے کہاکہ بین الاقوامی سطح پر میزبانی کے کچھ تقاضے ہوتے ہیں، میں بار ہا کہتا رہا ہوں کہ سیاست اور کھیل کو ایک ترازو میں نہیں تولنا چاہیے، دونوں کے معاملات کو علیحدہ رکھنا چاہیے۔

(جاری ہے)

ورلڈ جونئیر اسکواش کے ٹیم اور انفرادی مقابلے 18 جولائی سے بھارت کے شہر چنئی میں شروع ہو رہے ہیں جس کیلئے دفاعی چمپئن پاکستان ٹیم کو بھارتی ہائی کمیشن نے بغیر کسی وجہ کے ویزا جاری کر نے سے انکار کر دیا ہے۔

ورلڈ اسکواش فیڈریشن کے ماضی میں صدر رہنے والے جہانگیر خان کا کہنا ہے کہ پاکستان اسکواش فیڈریشن نے انٹرنینشل اسکواش فیڈریشن سے درخواست کر کے درست قدم اٹھایا ہے کہ ایونٹ کو کہیں اور منتقل کیا جا ئے۔اسکواش لیجنڈ کا موقف تھا کہ بھارت کی ہٹ دھرمی افسوس ناک ہے، پاکستانی اسکواش کھلاڑی ایک مقام رکھتے ہیں، انہیں صرف اس لئے اپنے اعزاز کے دفاع سے محروم رکھنا کے ایونٹ بھارت میں منعقد ہو رہا ہے،کسی بھی طرح قابل قبول نہیں ہوگا ۔

متعلقہ عنوان :