عدالتی پابندی ختم ہونے کے بعد معذور افراد کا تین فیصد ملازمت کو ٹہ پر عملدرا ٓ مد کے لئے اقدامات تیز کئے جا ئیں گے، سارہ حیات

بدھ جون 18:55

راولپنڈی ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) ایڈ یشنل ڈ پٹی کمشنر(جنرل) سا رہ حیات نے چیف ایگز یکٹو آ فیسر ایجوکیشن اتھا ر ٹی قا ضی طار ق محمو دو د یگر افسران کو ہدا یت کی کہ معذور و نا بینا افراد کی ما ہا نہ اجر ت کے حو الے سے کو ئی غیر ضروری تا خیر نہ کی جائے ۔ عدا لتی پا بند ی کی و جہ سے ابھی بھر تیاں نہیں ہو ر ہی تا ہم پا بند ی ختم ہو تے ہی تین فیصد کو ٹہ پر عملدرا ٓ مد کے لئے اقدامات تیز کئے جا ئیں گے۔

ملکی تر قی کو یقینی بنانے کے لئے ز ند گی کے ہر شعبے سے تعلق ر کھنے والے افراد کو معا شی سر گر می میں شا مل کر نا ضروری ہے۔ ان خیا لات کا اظہا ر انہوں نے ڈپٹی کمشنر آفس را ولپنڈی میں پی ڈبلیو ڈیز کے سلسلے میں منعقدہ اجلا س کی صد ا رت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں ڈائریکٹر سو شل و یلفیئر محمد اسلم میتلا ، ڈسی ای اوایجو کیشن قا ضی طا رق، ڈاکٹر فا ضیہ ڈسٹر کٹ آفیسر سپیشل ایجوکیشن ، فو کل پر سن نابینا ومعذ ور افراد نبیل ستی، عمران و دیگر متعلقہ سرکاری افسران نے شر کت کی۔

(جاری ہے)

سا رہ حیا ت نے کہا ہے کہ حکو مت پنجاب نے اس ضمن میں عملی اقدامات کا آغاز کر تے ہو ئے سر کا ری محکمو ں میں بھر تی کے حوالے سے مقر رہ 03فیصد کوٹے پر عملدرآمدکو یقینی بنایا گیا ہے اور ا ن کی آسانی کو مد نظر ر کھتے ہو ئے ٹرا نسفر و پو سٹنگ کو گھر کے قر یب ترین ادارے میں ایڈ جسٹ کیا گیا ہے تا کہ ان معذ ور و نا بینا افراد کو ز ند گی کے مر کز ی د ھا رے میں شامل کیا جا سکے ۔

انہوں نے کہا کہ بلا شبہ معذوور افراد کو اللہ اس ایک کمی کے ساتھ بے شمار دو سر ی نعمتو ں سے نوا زتا ہے اور اب یہ ہما ری ذمہ دا ری ہے کہ ان کی صلا حیتوں کو برئوے کار لا تے ہو ئے معاشرے کے فعا ل ر کن بنا نے کی کو شش کریں تا کہ کسی پر بو جھ بننے کے بجائے و ہ کا ر آمد افرا دی قو ت بن سکیں۔ڈا ئر یکٹر سو شل و یلفئیر محمد اسلم میتلا نے اس مو قع معذ ور و نابینا افراد کی بھر تیو ں اورروزانہ اجر ت کے حو الے سے ہو نے والی پیش ر فت سے آگاہ کر تے ہو ئے کہا کہ حکو متی ہد ایت کے مطا بق ان افراد کو مختلف سرکاری محکموں میں میر ٹ کی بنیا د پر بھر تی کر نے کے بعد اس با ت کو بھی یقینی بنایا جا رہا ہے کہ ان سے کو ئی سہل اور ان کی صلا حیتو ں کیمطابق کام لیاجائے نہ کہ انہیں تر س و ہمد ر دی کی نذ ر کرتے ہو ئے ان کی با قی صلا حیتو ں کو بھی ضا ئع کیا جا ئے ۔

انہوں نے کہا کہ معذ ور افراد کی جانب سے مو صول ہو نے شکایات پر بھی پیش ر فت کی جا رہی ہے اور جس محکمے میں انہیں مشکلات کا سامنا ہے وہا ں کے سربراہ کوخصوصی ہد ایات پر مشتمل پمفلٹس بھیجے جا ئیں گے تا کہ وہ انہیں تمام سٹاف میںآگاہی کے لئے استعمال کر سکیں۔

متعلقہ عنوان :