این اے 57 مری سے شاہد خاقان عباسی کے کاغذات نامزدگی مسترد، حلقے سے الیکشن لڑنے کیلئے نا اہل قرار

شاہد خاقان عباسی نے کاغذات نامزدگی میں اثاثے چھپائے، وہ آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 پر پورانہیں اترتے،الیکشن ٹریبونل کا تحریری فیصلہ جاری

بدھ جون 20:29

این اے 57 مری سے شاہد خاقان عباسی کے کاغذات نامزدگی مسترد، حلقے سے الیکشن ..
راولپنڈی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 جون2018ء) الیکشن ایپلٹ ٹریبونل نے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے آبائی حلقے این اے 57 مری سے کاغذات نامزدگی مسترد کرتے ہوئے انہیں اس حلقے سے الیکشن لڑنے کیلئے نااہل قرار دے دیا۔راولپنڈی کے الیکشن ایپلٹ ٹریبونل کے جج جسٹس عباد الرحمن لودھی نے پاکستان تحریک انصاف کے کارکن مسعود احمد عباسی کی جانب سے شاہد خاقان عباسی کے کاغذات نامزدگی کی منظوری کیخلاف دائر اپیل پر سماعت مکمل کرکے دو روز قبل اس پر فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

الیکشن ٹریبونل کے سربراہ جسٹس عبادالرحمن لودھی نے تحریری فیصلے میں کہا ہے کہ شاہد خاقان عباسی آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 پر پورانہیں اترتے۔فیصلے کے مطابق سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کاغذات نامزدگی میں اثاثے چھپائے، وہ 62 ون ایف کے تناظرمیں اہل نہیں ہیں۔

(جاری ہے)

اعتراض کنندہ مسعود احمد عباسی نے مؤقف اپنایا تھا کہ شاہد خاقان عباسی نے ریٹرننگ افسر کو دیئے گئے ریکارڈ میں ٹیمپرنگ کی اور جائیداد کی درست تفصیلات نہیں بتائیں۔

اعتراض کنندہ نے کہا تھاکہ شاہد خاقان عباسی نے لارنس کالج کے جنگل پر قبضہ کر رکھا ہے، ان کے کاغذات میں ایف سیون ٹو میں مکان کی ملکیت بھی کاغذات نامزدگی میں کم لکھی گئی ہے، کاغذات نامزدگی میں پہلے 100 روپے والا سٹامپ پیپر لگایا گیا اور بعد ازاں 500 روپے والا سٹامپ پیپر لگایا گیا۔۔الیکشن ایپلٹ ٹریبونل نے درخواست گزار کے تمام اعتراضات کو منظور کرتے ہوئے سابق وزیراعظم کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیئے۔