اسرائیل کے سابق وزیر دفاع موشے یالون کا وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کا مقابلہ کرنے کے لئے نئی سیاسی جماعت تشکیل دینے کا اعلان

بدھ جولائی 12:00

مقبوضہ بیت المقدس ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 جولائی2018ء) اسرائیل کے سابق وزیر دفاع اور سینئر سیاست دان موشے یالون نے وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کا سیاسی میدان میں مقابلہ کرنے کے لئے نئی سیاسی جماعت تشکیل دینے کا اعلان کیا ہے۔

(جاری ہے)

عبرانی اخبار معاریو نے اپنی ایک حالیہ رپورٹ میںکہا ہے کہ موشے یالون ایک نئی سیاسی جماعت تشکیل دینے کا ارادہ رکھتے ہیں اور وہ اس نئی جماعت کے ذریعے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کا سیاسی میدان میں مقابلہ کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ موشے یالون نے نیتن یاہو کی قیادت میں اسرائیلی حکومت کا حصہ بننے سے انکار کردیا ہے اور وہ وزیراعظم کا سیاسی میدان میں آزادانہ انداز میں مقابلہ کرنا چاہتے ہیں۔ ان کی نئی سیاسی جماعت میں دائیں اور بائیں بازو کے سیاست دان شامل ہوسکتے ہیں۔واضح رہے کہ نیتن یاہو نے دو سال قبل موشییالون کو وزارت دفاع کے عہدے سے برطرف کردیا تھا۔ اس کے بعد انہوں نے متعدد بار ایک نئی سیاسی جماعت کی تشکیل کا اشارہ دیا تھا۔