ڈی جی ایف آئی اے کو تبدیل کیا گیا تو سخت ایکشن لیں گے، چیف جسٹس پاکستان

اصغرخان کیس میں بشیر میمن کو نہ ہٹانے کا حکم دیا تھا،تفتیش مکمل ہونے تک بشیر میمن ڈی جی ایف آئی اے رہیں الیکشن کمیشن کو عدالتی حکم سے آگاہ کردیا ہے،ڈی جی ایف آئی اے کو تبدیل نہیں کیا گیا‘ایڈیشنل اٹارنی جنرل

بدھ جولائی 12:10

ڈی جی ایف آئی اے کو تبدیل کیا گیا تو سخت ایکشن لیں گے، چیف جسٹس پاکستان
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 جولائی2018ء) چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ اصغرخان کیس میں بشیر میمن کو نہ ہٹانے کا حکم دیا تھا،تفتیش مکمل ہونے تک بشیر میمن ڈی جی ایف آئی اے رہیں گے ،کل سے میڈیا میں ڈی جی ایف آئی اے کے تبادلے کا شور ہے،عدالتی حکم کی خلاف ورزی ہوئی تو سخت ایکشن لیں گے ۔تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس پاکستان نے ڈی جی ایف آئی اے کی تبدیلی کی خبروں کا نوٹس لیتے ہوئے کہا ہے کہ اصغرخان کیس میں بشیر میمن کو نہ ہٹانے کا حکم دیا تھا،تفتیش مکمل ہونے تک بشیر میمن ڈی جی ایف آئی اے رہیں گے ،کل سے میڈیا میں ڈی جی ایف آئی اے کے تبادلے کا شور ہے۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو عدالتی حکم سے آگاہ کردیا ہے،ڈی جی ایف آئی اے کو تبدیل نہیں کیا گیا ،چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ عدالتی حکم کی خلاف ورزی ہوئی تو سخت ایکشن لیں گے ۔

(جاری ہے)

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ڈی جی ایف آئی اے سے مکالمہ کرتے ہوئے کہاکہ یہ بتائیں محسن وڑائچ لندن کیسے چلا گیا ، این آئی سی ایل کیس میں محسن وڑائچ کا نام ای سی ایل میں تھا،آپ بلاشبہ تفتیشی ادارے کے سربراہ ہیں،میرے اپنے بھی ذرائع ہیں جہاں سے خبر ملی ۔

ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ میرے خیال میں محسن وڑائچ پاکستان سے نہیں گیا،چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ عدالتی حکم کے بعد محسن وڑائچ لندن پہنچا،ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن نے کہاکہ محسن وڑائچ کی روانگی کی تفصیلات آج ہی اکٹھی کروں گا۔