جولائی کوعوام کا ٹھاٹھیں مارتا سمندراپنے قائدکا استقبال کریگا‘نواز شریف پاکستان وزیر اعظم بننے نہیں بلکہ ملک و قوم کی خاطر جیل جانے آرہا ہے‘

عوام کے منتخب کردہ بلدیاتی نمائندوں کو معطل کرنا کسی بھی صورت جائز نہیں‘ مسلم لیگ(ن) تعمیر کرنیوالی جبکہ تحریک انصاف ملک تباہ کرنیوالی جماعت ہے‘ پاکستان مسلم لیگ(ن) کے صدرو سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کا بلدیاتی نمائندوں اورکارکنوں سے خطاب

بدھ جولائی 23:34

جولائی کوعوام کا ٹھاٹھیں مارتا سمندراپنے قائدکا استقبال کریگا‘نواز ..
لاہور۔11 جولائی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جولائی2018ء) پاکستان مسلم لیگ(ن) کے صدرو سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے کہا ہے کہ 13 جولائی کوعوام کا ٹھاٹھیں مارتا سمندراپنے قائدکا استقبال کریگا‘ایک فیصلہ عدالت نے کیا اور ایک فیصلہ جمعہ کے روز عوام ایئرپورٹ پر دیں گے ‘ نواز شریف پاکستان وزیر اعظم بننے نہیں بلکہ ملک و قوم کی خاطر جیل جانے آرہا ہے‘ اربوں روپے کی کرپشن کے کیسز نیب میں کئی سالوں سے پڑے ہیں جن پرکوئی توجہ نہیں جبکہ نواز شریف پر بنائے جانے والے مقدمات مہینوں میں مکمل کئے جارہے ہیں‘ ان فیصلوں کوعوام کسی صورت نہیں مانتے‘ عوام کے منتخب کردہ بلدیاتی نمائندوں کو معطل کرنا کسی بھی صورت جائز نہیںہے‘ مسلم لیگ(ن) تعمیر کرنیوالی جبکہ تحریک انصاف ملک تباہ کرنیوالی جماعت ہے‘ وہ بدھ کے روز جوہر ٹائون میں بلدیاتی نمائندوں اورکارکنوں سے خطاب کررہے تھے‘ شہباز شریف نے کہاکہ ہارون بلور کی شہادت رائیگاں نہیں جائے گی‘ ان کی قربانیوں کی بدولت ملک میں امن و سکون ہو گا‘ انہوں نے کہاکہ جمعہ کے روز میرے اور آپ کے قائد نواز شریف مریم نواز کے ہمراہ پاکستان واپس آرہے ہیں اورہم سب ان کا فقید المثال استقبال کرینگے‘ ملک کو ایٹمی طاقت بنانے والا لیڈر اس باروزیراعظم بننے نہیں بلکہ ملک و قوم کی خاطر گرفتارہونے آرہا ہے‘ انہوں نے کہاکہ نواز شریف کی اہلیہ اس وقت زندگی اورموت کی کشمکش میں مبتلاہے،انہیں یہ معلوم ہے کہ شایدوہ دوبارہ ان سے نہ مل سکیں اور یہ بھی معلوم ہے کہ ان کو ملک میں ان کی بوڑھی والدہ سے بھی نہ ملنے دیا جائے اور گرفتار کرلیا جائے لیکن ان تمام حالات کے باوجود وطن واپس آرہے ہیں‘ شہباز شریف نے کہا کہ ایک فیصلہ نیب عدالت نے سنایا ہے اور اب ایک فیصلہ 13جولائی کو عوام کا ٹھاٹھیں مارتا سمندر ایئر پورٹ پر سنائے گا‘ انہوں نے کہا کہ عدالت نے بڑا واضح فیصلہ میں لکھا ہے کہ نواز شریف پر کرپشن کا کوئی کیس نہ ہے‘ تاہم پھر بھی انہیں دس سال کی سزا سنا دی گئی‘ اس وقت نیب میں اربوںکی کرپشن کے کیسز پڑے ہیں جن کی فائلوں پرگردجم چکی ہے‘ ان پرکوئی توجہ نہیں دی جارہی جبکہ نواز شریف کو 109 مرتبہ بلایا اور وہ ہر بار پیش ہوئے‘ اب کی بار عوام اس فیصلے کو مسترد کرتے ہیں‘ انہوں نے کہا کہ یہ وہی نواز شریف ہیں جس نے اربوں ڈالر کا لالچ اور بیرون دبائو کے باوجودایٹمی دھماکے کئے‘ شہباز شریف نے کہاکہ زرداری کے دور حکومت میں ہر شہرمیں بجلی نہ آنے پر احتجاج ہوا کرتا تھا اور میں بھی مینارپاکستان ٹینٹ لگا کر کالی پٹیاں باندھ کر بیٹھا کرتا تھا‘ پنجاب اندھیرے میں تھا لیکن پچھلے پانچ سالوں میں کہیں بھی کوئی احتجاج نہیںہوا‘ ہم نے ہزاروںمیگا واٹ کے منصوبے لگائے اورمنصوبے اس طرح لگے جیسے جن بھوت کام کرتے ہیں‘ یہ اللہ تعالیٰ کا کرم اور دن رات کی محنت سے ہوا‘ لاہوریوں کیلئے اورنج لائن لیکر آئے لیکن عمران خان اور اس کے حواری ہائیکورٹ پہنچ گئے کہ شہباز شریف اس پر کمیشن کھا رہا ہے اور عوامی منصوبوں کو سیاست کی نذر کرنے کی کوشش کی گئی‘ اگر 25 جولائی کو لاہور کے عوام نے انہیں شکست نہ دی تو میں سمجھوں گا کہ حق ادا نہیںہوا۔