کاروباری طبقے کو آسانیاں فراہم کئے بغیر اقتصادی ترقی ممکن نہیں ،میاں انجم نثار

جمعرات جولائی 16:27

کاروباری طبقے کو آسانیاں فراہم کئے بغیر اقتصادی ترقی ممکن نہیں ،میاں ..
چیچہ وطنی۔12 جولائی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جولائی2018ء) صوبائی وزیر کامر س اینڈ انڈسٹریز میاں انجم نثار نے صنعت کاروں پر زور دیا ہے کہ وہ ٹیکس ایمنسٹی سکیم میں شریک ہو کر اپنے تمام اثاثہ جات کو ڈیکلیئر کریں تا کہ مکمل ذہنی اطمینان کے ساتھ اپنے اپنے کاروبار پر توجہ دی جا سکے ،کاروباری طبقے کو آسانیاں فراہم کئے بغیر اقتصادی ترقی ممکن نہیں جس کیلئے ضروری اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں ، انہوں نے یہ بات ساہیوال چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی طرف سے اپنے اعزاز میں ہونے والی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی ، صوبائی وزیر لیبر میاں نعما ن کبیر کے علاوہ ڈیموکریٹک گروپ کے چیئرمین شیخ عظمت سلیم ، سینئر نائب صدر کامران سعید ، سابق صدور چوہدری صفدر رشید ، رانا وسیم اختر ، سہیل انجم انصاری ،چوہدری ارشد حسین اور چوہدری محمد حسین زاہد ، ممتاز سماجی شخصیت شیخ محمد یونس ستارہ امتیاز او رپی ایچ اے کے سابق چیئر مین حاجی احسان الحق ادریس اور بڑی تعداد میں صنعت کاروں اور تاجروں نے بھی تقریب میں شرکت کی ، انہوں نے کہا کہ عبوری مینڈیٹ کی وجہ سے پالیسی سازی نہیں کر سکتے تاہم کاروبار ی افراد کی مشکلات کو کم کرنے کی بھر پور کوشش کر رہے ہیں تا کہ روز گار کے مواقع کو بڑھایا جا سکے ، انہو ںنے تاجر طبقے پر زور دیا کہ وہ ایسے افراد کو ووٹ دیں جو عوامی مسائل حل کر سکیں تا کہ ملک جن بحرانوں سے دوچار ہے ان سے نکل سکے ، انہو ں نے کہا کہ ملک کی اقتصادی حالت بہتر بنانے کیلئے ضروری ہے کہ صنعتی ترقی کی رفتار تیز کی جائے اور برآمدت بڑھائی جائیں اور زر مبادلہ پر پڑنے والے دبائو سے نمٹا جاسکے ، صوبائی وزیر میاں انجم نثار نے نئے ڈیموں کی تعمیر فوری شروع کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ توانائی کے ذرائع خصوصا بجلی سستی مہیا کئے بغیر پاکستانی بر آمدکنندگان عالمی منڈیوں میں دوسرے ممالک کا مقابلہ نہیں کر سکتے ، تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈیموکریٹک گروپ کے چیئرمین شیخ عظمت سلیم نے سمال انڈسٹرئیل اسٹیٹ میں ڈسپلے سنٹر اور چیمبر کی نئی عمارت کی تعمیر کیلئے جگہ مختص کرنے کا مطالبہ کیا جسے صوبائی وزیر نے فوری طور پر تسلیم کرنے کا اعلان کیا ، انہوں نے چیمبر کے موجودہ صدر شیخ ذیشان شہزاد کی ایک سالہ کارکردگی کو ناقص قرار دیا اور کہا کہ اس پورے عرصے میں خطے کی صنعتی ترقی اور تاجروں کے مسائل کرنے کیلئے کوئی کام نہیں کیا گیا۔

متعلقہ عنوان :

Your Thoughts and Comments