افغانستان میں امن اومان کیلئے مفاہمتی اقدامات کی مکمل حمایت کرتے ہیں،دفتر خارجہ

افغان طالبان اور کابل حکومت کو امن مذاکرات کی میز پر لانا تمام سٹیک ہولڈرز کی ذمہ داری ہے،بھارتی افواج نہتے کشمیریوں پر ظلم کا سلسلہ جاری ہے،مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے عالمی برادری کرادار ادار کرے،پاک،امریکہ تعلقات پر بات چیت جاری ہے،تفصیل شیئر نہیں کر سکتے،آسیہ اندرابی او ر ان کی ساتھی خواتین کو تہاڑ جیل سے دہلی منتقل کرنے کی مذمت کرتے ہیں،اسلام آباد کشمیریوں کا مقدمہ ہرفورم پر لڑتا رہا ہے،ایف اے ٹی ایف کو محکمہ خارجہ صرف معاونت کررہا ہے اسکو ڈیل محکمہ خزانہ کر رہاہے،ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل کی ہفتہ وار پریس بریفنگ

جمعرات جولائی 23:02

افغانستان میں امن اومان کیلئے مفاہمتی اقدامات کی مکمل حمایت کرتے ہیں،دفتر ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جولائی2018ء) ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا ہے کہ پاکستان ، افغانستان میں امن وامان کے قیام کیلئے مفاہمتی اقدامات کی حمایت کرتاہے ، افغان طالبان اور کابل کو مذاکرات کی میز پر لانا تمام اسٹیک ہولڈرز کی ذمہ داری ہے، بھارتی افواج نہتے کشمیریوں پر ظلم کا سلسلہ جاری ہے، موجودہ دور میں بھارتی مظالم کی تاریخ میں کوئی مثال نہیں ملتی ۔

رواں ہفتے 8جولائی کو برہان وانی کی شہادت کی دوبرسی منائی گئی ، مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے بین الاقوامی برادری کا اپنا کردار اداکرنا چاہیے۔ گزشتہ دفترخارجہ میں ہفتہ وارپریس بریفنگ کے دوران ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا کہ پاکستان اپنے ہمسایہ ملک افغانستان میں مفاہمتی عمل میں تمام تراقدامات کی حمایت کرتا ہے، تاہم طالبان اور افغان حکومت کو مذاکرات کی میز پر لانے کیلئے تمام اسٹیک ہولڈر ز کو اپنا کردا ر اداکرنا چاہیے۔

(جاری ہے)

سعودی حکومت کی جانب سے افغان طالبان مذاکرات کے متعلق سوال پر انہوںنے جواب دینے سے گریز کیا اور کہا کہ پاکستان طالبان کے افغانستان کے مابین مفاہمت ، امن کے تمام تراقدامات کی حمایت کرتا ہیاور آئندہ بھی افغان مفاہمتی عمل میں ہرممکن معاونت فراہم کرے گا۔ تاہم طالبان کو مذاکرات کی میز پر لانے کیلئے تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔

پاکستان اور امریکہ کے مابین بات چیت کے حوالے سے ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ دونوں ممالک کے مابین بات چیت جار ی ہے، البتہ اسکی تفصیلات میڈیا سے شیئر نہیں کرسکتے ، انہوں نے امید ظاہر کی کہ امریکہ پاکستان بات چیت کے مثبت پیش رفت ہوگی۔ انہوںنے ایران ، روس،، چین کی خفیہ ایجنسیوں کے حکام کے دورے پر لاعملی کا اظہا رکیا۔ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج نہتے کشمیریوں پر ظلم وبربریت کا سلسلہ جاری ہے جس کی تاریخ میں کوئی مثال نہیں ملتی ۔

8جولائی کو برہان وانی کی دوبرسی منائی گئی، گزشتہ دوسالوں کے دوران بھارتی افواج نے نہتے کشمیریوں پر بے پناہ مظالم ڈھائے ہیں، سیکنڈوں کشمیریوں کو شہید ، ہزاروں کو پیلٹ گن کے ذریعے بینائی سے محروم کیا گیااور ہزاروں افراد کو شدید زخمی کیا گیا۔ ترجمان نے بتایا کہ گزشتہ ہفتے کے دوران بچوں سمیت 8 کشمیری شہید کردیے ۔ انہوںنے آسیہ اندرابی او ر ان کی ساتھی صوفیہ کو تہاڑ جیل منتقل کرنے کی مذمت کی۔

ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ 1947ء سے لیکر کشمیریوں نے جرات کے ساتھ بھارتی مظالم کا مقابلہ کیا جو تاحال جاری ہے۔۔اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن نے بھی انسانی حقوق کے خلاف ورزیوں کی رپورٹ جاری کی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ مسئلہ کشمیرکو بین الاقوامی سطح پر اجاگر کرنا وزارت خارجہ کی پالیسی کا اہم ستون ہے اور اس پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ، پاکستان کشمیریوں کا مقدمہ ہرفورم پر لڑتا رہا ہے۔

بین الاقوامی برادری کو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ اور مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی امنگوں کے مطابق حل ہونا چاہیے۔ایف اے ٹی ایف کے بارے ایک سوال کے جواب میں ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ ایف اے ٹی ایف کو وزارت خزانہ ڈیل کررہا ہے اور وزارت خارجہ اس سلسلے میں معاونت کررہا ہی