اس وقت پوری قوم کی نظریں سینٹ پر ہیں ، ایوان بالا کو ایک طریقہ کار اپنانا ہوگا ،رحمان ملک

پی پی پی کی مسلسل تذلیل کی جارہی ہے جس طرح پوری دنیا میں بدنام کیا گیا اس کی مذمت کرتے ہیں کون کرپٹ ہے یہ بحث شروع ہوئی تو اتنا کچھ کھول دونگا کہ کوئی بھی باہر نہیں نکل سکے گا ، ایوان بالا اجلاس میں عوامی مفادات عامہ سے متعلق بحث پر خطاب میڈیا پر بدترین قدغن لگائی گئی ہیں سب سے پہلے الیکشن کمیشن کو آزاد کرانے کی ضرورت ہے ،رائو انوار کو سزا کی بجائے پروٹوکول دیا جارہا ہے، اس سے پختونوں کو کیا پیغام دیاج جارہا ہے ،سینیٹر عثمان کاکڑ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ الیکشن مشکوک بنایا جارہا ہے یہ تاثر بھی دیا جارہا ہے کہ ایک پارٹی جیتنے جارہی ہے ہم جیتنے جارہے ہیں اور اگلی حکومت بنائیں گے،سینیٹر شبلی فراز و دیگر کا ایوان بالا میں اظہار خیال

جمعرات جولائی 23:36

اس وقت پوری قوم کی نظریں سینٹ پر ہیں ، ایوان بالا کو ایک طریقہ کار اپنانا ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جولائی2018ء) سینٹ اجلاس میں عوامی مفادات عامہ کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے سینییٹر رحمان ملک نے کہا کہ اس وقت پوری قوم کی نظریں سینٹ پر ہیں اس لئے ایوان بالا کو ایک ایساطریقہ کار بنانا ہوگا جتنے بھی مسائل ہیں اس کا راستہ دیاجائے پی پی پی پچھلے ایک ہفتے سے تذلیل کی گئی اب بتایا جارہا ہے کہ آصف زرداری کا نام ای سی ایل میں نہیں ڈالا گیا پاکستان پیپلز پارٹی کو پوری دنیا میں جس طریقے سے بدنام کیا گیا اس کی مذمت کرتے ہیں اگر یہ بحث شروع ہوگئی تو کون کرپٹ ہے تو میں اتنا کچھ کھول کر بتا دوں گا کہ کوئی بھی باہر نہیں نکل سکے گا انہوں نے کہا کہ امیدوار ووٹروں اور سٹاف سب کی سکیورٹی کو یقینی بنانا ہوگا سینیٹر عثمان کاکڑ نے کہا کہ میڈیا پر بدترین قدغن لگائی گئی ہیں سب سے پہلے الیکشن کمیشن کو آزاد کرانے کی ضرورت ہے جس طرح عوام کے منتخب نمائندوں کے ساتھ رویہ رکھا ہوا ہے ان کے ساتھ بھی مشرف والا سلوک ہوا ہے پولیس دہشتگرد رائو انوار کے ساتھ کئے گئے سلوک سے پختونوں کو کیا پیغام دیا گیا ہے رائو انوار کو سزا کی بجائے پروٹوکول دیا جارہا ہے ۔

سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ الیکشن مشکوک بنایا جارہا ہے یہ تاثر بھی دیا جارہا ہے کہ ایک پارٹی جیتنے جارہی ہے ہم جیتنے جارہے ہیں اور اگلی حکومت بنائیں گے اس ایوان کو صرف پارٹیوں کیلئے استعمال نہیں ہونے دینگے یہ وہی لوگ ہیں جنہوں نے اداروں کو تباہ کیا ہے اب ایک نیا پاکستاان بننے جارہا ہے آپ لوگوں نے عمران خان کیخلاف کیس کیا جس کا عمران نے جواب دیا اور آپ اپنی منی لانڈرنگ کا جواب نہیں دے سکے اب سارے اپنی کرپشن کو چھپانے کیلئے شور مچا رہے ہیں اور عوام میں بے چینی پھیلانے کی کوشش کررہے ہیں اب جو الیکشن کو مشکوک قرار دینے کی کوشش کررہے ہیں یہ لوگ اس وقت کہاں تھے جب سرے عام دھاندلی ہورہی تھی پاکستان تحریک انصاف نے اس نظام کیخلاف دھرنا دیا اور کھڑی رہی جس نے کچھ کیا نہیں اسے ڈرنا بھی نہیں چاہیے سینیٹر کلثوم پروین نے کہا کہ اس وقت تمام سیاسی جماعتوں کی جانب سے تحفظات آرہے ہیں وہ سارے الیکشن کمیشن پر ہیں اس ایوان میں الیکشن کمشنر کو بلا کر تحفظات دور کئے جائیں ای سی ایل میں آصف زرداری اور ان کی بہن کا نام ڈالا گیا ہے الیکشن کمیشن کے ان اقدامات سے مشکوک ہوتا جارہا ہے الیکشن کمیشن اپنے اختیارات سے تجاوز کررہا ہے ایک امیدوار کو کس قانون کے تحت نااہل قرار دیا جارہا ہے ۔

سینیٹر طاہر بزنجو کا کہنا تھا کہ اس وقت ملک کا سب سے بڑا سوال ہے کہ وہ سیاسی قائدین اور امیدواروں کی سکیورٹی کا ہے ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ حکومت کی جانب سے ہمیشہ بلوچستان کو نظر انداز کیا جاتا رہا ہے دو ہزار تیرا میں بلوچستان میں شدید بدامنی تھی ابھی بھی وہاں حالات مکمل نارمل نہیں ہوئے گوادر سی پیک کا سب سے اہم حصہ ہے لیکن وہاں اس وقت بجلی اور پانی کا بہت بڑا مسئلہ ہے

Your Thoughts and Comments