ملک میں جاری معاشی مسائل اور دہشت گردی کے پے در پے واقعات پائی جانیوالی تشویش کو بڑھا رہے ہیں، حکومت چاہیے سیاسی لیڈروں اور امیدواروں کو فول پروف سیکورٹی فراہم کرے، آفتاب احمد خان شیرپائو کا مطالبہ

اتوار جولائی 20:10

پشاور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 جولائی2018ء) قومی وطن پارٹی کے مرکزی چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپائونے کہا ہے کہ ملک میں جاری معاشی مسائل اور دہشت گردی کے پے در پے واقعات پائی جانے والی تشویش کو بڑھا رہے ہیں،الیکشن چنددن ہی دور ہیں، ایسے حالات کے پیش نظر حکومت کو چاہیے کہ سیاسی لیڈروں اور امیدواروں کو فول پروف سیکورٹی فراہم کرے تاکہ وہ صحیح معنوں میں عوام کے سامنے اپنا منشور پیش کر سکیں ۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے ایبٹ آباد بار کلب میں عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر قومی وطن پارٹی ضلع ایبٹ آباد کے عہدیدار اور پارٹی امیدواربھی موجود تھے۔ آفتاب شیرپائو نے کہا کہ مختلف سیاسی جماعتوں نے اعتراض کیا ہے کہ نگران حکومت مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے اور یہ تاثر سامنے آنا کہ ایک لیڈر جلسے کرنے میں آزاد ہوں اور دوسروں کو اجازت نہ ہوں،اس طرح کے منفی تاثرات سے نگران حکومت کی ساکھ متاثر ہو رہی ہے۔

(جاری ہے)

انھوں نے کہا کہ سیاسی لیڈروں اور امیدواروں کو فول پروف سیکورٹی فراہم کرنا حکام کا کام ہے اور ان کو چاہیے کہ اس کو یقینی بنائے،ملک کی معیشت دن بدن کمزور ہوتی جارہی ہے جوکہ ملکی سلامتی کیلئے نیک شگون نہیں،مرکزی سطح پر سیاسی جماعتیں ایک دوسرے پر الزامات لگا رہی ہیں جبکہ معیشت کی بہتری کیلئے کوئی اقدام نہیں اٹھایا جا رہا جوکہ ایک افسوسناک امر ہے،معیشت کی بہتری کیلئے ایسے اقدامات اٹھانے چاہیے جس سے ہم اپنے پائوں پر کھڑے ہو سکیں۔

انھوں نے کہاکہ قومی وطن پارٹی جمہوری اداروں کے استحکام پر یقین رکھتی ہے اور چاہتی ہے کہ جمہوری اداروں کو فروغ ملے۔انھوں نے کہا کہ قومی وطن پارٹی نے صوبہ میں پسماندہ رہ جانے والے علاقوں جیسا کہ ضم شدہ علاقہ جات اورہزارہ ڈویژن کے عوام کو محرومیوں سے نکالنے کا عزم کر رکھا ہے اوروہ ان علاقوں کی ترقی کیلئے بھرپور جدوجہد کرے گی۔انھوں نے کہا کہ صوبہ میں تین بڑی سیاسی جماعتوں نے اقتدار میں آکرپسماندہ علاقوں کی ترقی اور عوام کو مایوسیوں کے خاتمے کیلئے کچھ نہیں کیا ،اگر عوام نے اس مرتبہ قومی وطن پارٹی پر اعتماد کرتے ہوئے ان کو یکساں موقع فراہم کیا تو وہ اقتدار میں آکر ان میں پانے جانے والی مایوسیوں اور پریشانیوں کو دور کرنے کیلئے عملی اقدامات اٹھائے گی۔

انھوں نے کہا کہ ملک میں جاری واٹر کرائسزکیلئے حکمت عملی بنانی چاہیے ،ڈیموں کی تعمیر ناگزیر ہے لیکن ہم یہ یقین رکھتے ہیں کہ عوامی مسائل ایوان میں حل ہونے چاہیے۔انھوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو اس بابت اپنا اپنا کردار اداکرنا چاہیے۔