سی پیک منصوبہ عوام کے معیار زندگی کو بہتر کرنے میں گیم چینجر منصوبہ ثابت ہوگا،

منصوبہ سے مختلف خطوں کے مابین رابطہ سازی بہتر ہوگی ، پاکستان میں انفراسٹرکچرکی بہتری ممکن ہوسکے گی سابق وزیراعظم شوکت عزیز کا بیجنگ میں تقریب سے خطاب

پیر جولائی 22:27

بیجنگ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 جولائی2018ء) سابق وزیراعظم شوکت عزیز نے امید ظاہر کی ہے کہ چین پاکستان اقتصادی رہداری ((سی پیک ) منصوبہ عوام کے معیار زندگی کو بہتر کرنے میں گیم چینجر منصوبہ ثابت ہوگا، منصوبہ سے مختلف خطوں کے مابین رابطہ سازی بہتر ہوگی جبکہ پاکستان میں انفراسٹرکچرکی بہتری ممکن ہوسکے گی۔ پیر کو ان خیالات کا اظہار سابق وزیراعظم نے چین کی معروف یونیورسٹی میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی رہداری ((سی پیک ) منصوبہ عوام کے معیار زندگی کو بہتر کرنے میں گیم چینجر منصوبہ ثابت ہوگا، منصوبہ سے مختلف خطوں کے مابین رابطہ سازی بہتر ہوگی جبکہ پاکستان میں انفراسٹرکچر کی بہتری ممکن ہوسکے گی۔انہوں نے کہا کہ حالیہ سالوں میں بلٹ اینڈر وڈ کے تحت مختلف منصوبوں میں کامیابی کے ساتھ کام مکمل کیا گیا ہے ۔

(جاری ہے)

سی پیک کے بعد پاکستان معیشت پر ماہرین کی گہری نظر ہے پاکستانی معیشت کو وسائل کی ضرورت ہے اور یہ وسائل پاکستانی معیشت کو حاصل ہورہے ہیں۔ ترقی پذیر ملک ہونے کے ناطے سی پیک منصوبوں کیلئے صرف مقامی وسائل پر بھروسہ نہیں کرسکتا۔ پاکستان کو یہ منصوبے مکمل کرنے کیلئے فنڈز حاصل کرنے کا نظام بہتر بنانا ہوگا بصورت دیگر یہ منصوبے مکمل نہیں ہونگے۔

منصوبوں کی تعمیر کے دوران عوام کو اثرات منتقل ہوتے نظر نہیں آئیں گے جس کے باعث مالیاتی نظام پر دبائو آسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میری معلومات کے مطابق پاکستان ان منصوبوں کیلئے کافی فنڈز کا بندوبست کرچکا ہے لہذا شاہراوں کی تعمیر توانائی کے منصوبوں کی تکمیل اور بندرگاہ پر کام مکمل ہونے کے بعد ملک میں تبدیلی نظر آئے گی اور یہ منصوبے اچھے معاشی نتائج دیں گے۔ پاکستان کے پیداواری شعبہ میں بڑھوتری کے روشن امکانات ہیں ۔۔پاکستان میں غیر معمولی اقدامات سیکیورٹی اور اچھے ایکو سسٹم کی ضرورت ہے۔ حکومت اہداف کو حاصل کرنے کیلئے اچھے اقدامات اٹھا رہی ہے۔