وزیراعظم عمران خان کا سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی دعوت پر سعودی عرب کا 2 روزہ دورہ

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر خزانہ اسد عمر، وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین اور وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق دائود بھی ان کے ہمراہ تھے، ملاقات کے دوران دونوں رہنمائوں نے باہمی تعلقات، علاقائی اور عالمی سیاسی صورتحال اور امت مسلمہ کو درپیش مسائل پر تبادلہ خیال کیا، وزیراعظم نے ولی عہد محمد بن سلمان سے بھی ملاقات کی جنہوں نے ان کے اعزاز میں عشائیہ بھی دیا۔ دونوں رہنمائوں نے اپنے وزراء اور سینئر حکام کے ہمراہ باہمی تعلقات کے استحکام، علاقائی سلامتی اور سیاسی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا

بدھ ستمبر 23:05

وزیراعظم عمران خان کا سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی دعوت ..
جدہ ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 ستمبر2018ء) وزیراعظم عمران خان نے 18 اور 19 ستمبر کو سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی دعوت پر سعودی عرب کا 2 روزہ دورہ کیا۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر خزانہ اسد عمر، وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین اور وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق دائود بھی ان کے ہمراہ تھے۔ وزیراعظم عمران خان کا سعودی فرمانروا خادم حرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے جدہ میں اپنے محل آمد پر ان کا استقبال کیا جہاں ان کو گارڈ آف آنر پیش کیا گیا۔

ملاقات کے دوران دونوں رہنمائوں نے باہمی تعلقات، علاقائی اور عالمی سیاسی صورتحال اور امت مسلمہ کو درپیش مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔ انہوں نے متنوع باہمی تعلقات کو مزید مستحکم کرنے اور باہمی دلچسپی کے امور پر تعاون جاری رکھنے کی خواہش ظاہر کی۔

(جاری ہے)

اپنے دورہ کے دوران وزیراعظم نے ولی عہد محمد بن سلمان سے بھی ملاقات کی جنہوں نے ان کے اعزاز میں عشائیہ بھی دیا۔

دونوں رہنمائوں نے اپنے وزراء اور سینئر حکام کے ہمراہ باہمی تعلقات کے استحکام، علاقائی سلامتی اور سیاسی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔ انہوں نے سیاسی، دفاع، معاشی، کمرشل اور زرعی شعبوں میں تعاون مستحکم کرنے، اپنی بڑھتی ہوئی ضروریات کے تناظر میں مشترکہ منصوبے شروع کرنے، انسانی وسائل میں تعاون کے فروغ اور سعودی عرب میں پاکستانی تارکین وطن کو درپیش مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔

پاکستان اور سعودی عرب نے اپنے مشترکہ مذہب کی بنیاد پر گہرے تاریخی اور برادرانہ تعلقات، مشترکہ ثقافت و اقدار، علاقائی اور عالمی امن و سلامتی کیلئے اپنے عزم کا اعادہ کیا۔ فریقین نے علاقائی و عالمی امور اور امت مسلمہ کو درپیش مسائل پر یکساں نقطہ نظر پر اطمینان ظاہر کیا۔ اپنے عشروں پرانے تعلقات کی بنیاد پر دونوں ممالک نے ایک دوسرے کی علاقائی سلامتی اور خود مختاری کیلئے کوششوں پر مکمل یکجہتی کا اظہار کیا۔

انہوں نے ہر گھڑی ایک دوسرے کا ساتھ دینے کے عزم کا اعادہ کیا۔ پاکستان نے رواں سال احسن انداز میں کامیاب حج انتظامات پر سعودی قیادت کی تعریف کی اور امت مسلمہ کے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کیلئے ان کے احترام اور تعظیم کا اعتراف کیا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ولی عہد محمد بن سلمان کی دانشمندانہ قیادت میں سعودی عرب جدید اور ترقی یافتہ معیشت بن گیا ہے۔

سعودی قیادت نے پرامن اور شفاف انداز میں جمہوری طریقہ سے کامیاب انتقال اقتدار پر پاکستان اور وزیراعظم منتخب ہونے پر عمران خان کو مباکباد دی۔ وزیراعظم عمران خان کے پاکستان کو اسلامی سماجی اقتصادی اصولوں پر مبنی فلاحی ریاست بنانے کے نظریہ کی تعریف کرتے ہوئے سعودی قیادت نے پاکستان کو زیادہ سے زیادہ تعاون کا یقین دلایا۔ پاکستان نے سعودی عرب کے بھرپور تعاون پر شکریہ ادا کیا۔

پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کرنے والے کرداروں کو بے نقاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے سعودی قیادت کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی کامیابیوں اور قربانیوں سے آگاہ کیا۔ وزیراعظم نے مذہبی انتہاء پسندی، فرقہ واریت اور دہشت گردی کے فروغ کی کوششوں کو سختی سے مسترد کر دیا۔ وزیراعظم نے سعودی عرب کی جانب سے انتہاء پسندی اور دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے اقدامات کی تعریف کی اور خطہ میں دہشت گرد نظریات پھیلانے والی قوتوں کے متعلق اپنے خیالات سے آگاہ کیا۔

دونوں ممالک نے ایک دوسرے کی قربانیوں کا اعتراف کرتے ہوئے انتہاء پسندی اور دہشت گردی کو شکست دینے کیلئے اپنی شراکت داری جاری رکھنے کا عزم ظاہر کیا۔ انہوں نے ترقی اور خوشحالی یقینی بنانے کیلئے امن و سلامتی کے فروغ کی ضرورت پر اتفاق کیا۔ اس سلسلہ میں انہوں نے باہمی تعاون مزید مضبوط کرنے اور علاقائی اور کثیرجہتی فورموں پر تعاون کرنے پر بھی اتفاق کیا۔

وزیراعظم نے سعودی قیادت کو بھارتی مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں کی حالت زار اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں سے آگاہ کیا۔ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق سے متعلق انسانی حقوق کے ہائی کمشنر آفس کی رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے وزیراعظم نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل میں اس معاملہ کو بھرپور طریقہ سے اٹھانے کیلئے اسلامی ممالک کی یکجہتی اور اتحاد کی ضرورت پر زور دیا۔

دونوں ممالک نے فلسطینی عوام کے حقوق کی بحالی اور ان کیلئے آزاد ریاست جس کا دارالحکومت مقبوضہ بیت المقدس ہو، کے حصول کیلئے ان کی جدوجہد کی حمایت کے عزم کا اعادہ کیا۔ انہوں نے زور دیا کہ عالمی برادری کو غیر ملکی قبضہ کے خلاف اور اپنے حق خود ارادیت کیلئے جدوجہد کرنے والوں کی جدوجہد کا احترام کرنا چاہئے جس کا اقوام متحدہ کے منشور میں وعدہ کیا گیا ہے۔

اہم شعبوں میں جامع اور نتیجہ خیز باہمی تعاون کے تناظر میں دونوں ممالک نے اپنی تزویراتی شراکت داری کو مزید مستحکم کرنے کیلئے مشاورت اور رابطوں پر اتفاق کیا۔ وزیراعظم عمران خان نے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور ولی عہد محمد بن سلمان کو دورہ پاکستان کی دعوت دی جو سعودی قیادت نے اصولی طور پر قبول کر لی۔