وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین کی سعودی ہم منصب ڈاکٹر عواد بن صالح العواد سے ملاقات، باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال،وفاقی وزیر اطلاعات نے بھرپور استقبال کرنے پر خادم الحرمین شریفین اور سعودی حکام کا شکریہ ادا کیا،وزیراعظم پاکستان اور ان کے وفد کے لئے روضہ رسولؐ کے دروازے کھولنا پاکستان کے لئے باعث فخر ہے، دونوں ممالک کے درمیان مستحکم اور دوستانہ تعلقات ہیں،پاکستانی ڈرامہ پی ٹی وی کی اہم پراڈکٹ ہے، پاکستان اسے سعودی ٹی وی چینلوں کو فراہم کرنے کے لئے تیار ہے تاکہ وہ اسے ڈبنگ اور ذیلی عنوان سے مقامی زبان میں نشر کر سکیں،وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین

جمعرات ستمبر 00:00

جدہ ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 ستمبر2018ء) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے اپنے سعودی ہم منصب وزیر برائے میڈیا ڈاکٹر عواد بن صالح العواد سے بدھ کو یہاں ملاقات کی۔ سعودی پریس ایجنسی کے مطابق ملاقات کے دوران باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے بھرپور استقبال کرنے پر خادم الحرمین شریفین اور سعودی حکام کا شکریہ ادا کیا۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان اور ان کے وفد کے لئے روضہ رسولؐ کے دروازے کھولنا پاکستان کے لئے باعث فخر ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان مستحکم اور دوستانہ تعلقات ہیں جو کہ وقت گزرنے کے ساتھ مزید مستحکم ہو رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سعودی وزیر اطلاعات کا دورہ پاکستان بہت اہم تھا، انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان سمت متعین کی۔

(جاری ہے)

سعودی عرب کے وزیر ڈاکٹر عواد بن صالح العواد نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان میڈیا کے شعبہ میں تعاون کے وسیع مواقع موجود ہیں،دونوں ممالک کو ان مواقع سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے۔ وفاقی وزیر برائے اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے کہا کہ پاکستانی ڈرامہ پاکستانی ٹیلی ویژن صنعت میں اہم پراڈکٹ ہے، پاکستان اسے سعودی ٹی وی چینلوں کو فراہم کرنے کے لئے تیار ہے تاکہ وہ اسے ڈبنگ اور ذیلی عنوان سے مقامی زبان میں نشر کر سکیں۔

سعودی وزیر نے اس میں دلچسپی ظاہر کی اور سعودی چینلز کو کچھ ڈرامہ سیریل فراہم کرنے کی تجویز دی۔ فواد چوہدری نے سعودی وزیر کو بتایا کہ اسلام آباد میں ایک میڈیا یونیورسٹی کے قیام کا ارادہ رکھتے ہیں جس میں میڈیا کے تمام شعبوں کے لئے جدید تعلیم فراہم کی جائے گی۔ انہوں نے تجویز دی کہ سعودی عرب بھی اس منصوبے اور سعودی عرب کی سینما انڈسٹری کے حوالے سے اپنے نوجوانوں کی ترییت کے لئے پاکستان کا شراکت دار بن سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کی وزارتیں مشترکہ فلم سازی کے منصوبے پر بھی کام کر سکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشتگردی کے خلاف حقیقی جنگ میڈیا کے ذریعے لڑی جا رہی ہے،ہمیں اس کے خلاف مشترکہ میڈیا بیانیہ تشکیل دینے کی ضرورت ہے۔