وزیراعظم عمران خان نے مذاکرات کی بحالی کی دعوت پر بھارت کے رویئے کو منفی اور متکبر قرار دیدیا ،ْ مذاکرات نہ کر نے پر افسوس کا اظہار

اپنی پوری زندگی میں ادنی لوگوں کو بڑے بڑے عہدوں پر قابض ہوتے دیکھا ہے ،ْ یہ لوگ دور اندیشی سے یکسر محروم ہوتے ہیں ،ْوزیر اعظم

ہفتہ ستمبر 17:39

وزیراعظم عمران خان نے مذاکرات کی بحالی کی دعوت پر بھارت کے رویئے کو ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 ستمبر2018ء) وزیراعظم عمران خان نے مذاکرات کی بحالی کی دعوت پر بھارت کے رویئے کو منفی اور متکبر قرار دیتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے وزارتِ عظمیٰ کا منصب سنبھالنے پر اپنے بھارتی ہم منصب نریندر مودی کو ان کے تہنیتی پیغام کے جواب میں خط لکھا تھا جس میں دونوں ممالک کے درمیان مذاکرات کی بحالی پر زور دیا تھا اور اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران دونوں وزرائے خارجہ کی ملاقات کی تجویز دی تھی۔

بھارت کی جانب سے وزیراعظم کی تجویز پہلے قبول کی گئی اور ملاقات طے کردی گئی تھی تاہم اچانک بھارت ایک بار پھر پیچھے ہٹا اور اس ملاقات کو منسوخ کردیا۔پاکستان کی جانب سے بھارتی رویئے کی شدید مذمت کی گئی اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اسے بھارتی حکومت پر داخلی دباؤ قرار دیا۔

(جاری ہے)

وزیراعظم عمران خان نے بھی بھارت کی جانب سے مذاکرات کے جواب میں منفی رویئے کو مایوس کن قرار دیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بیان میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مذکرات کی بحالی کی میری دعوت کے جواب میں بھارت کا منفی اور متکبر رویہ باعث افسوس ہے۔وزیراعظم عمران خان نے اپنی ٹوئٹ میں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا نام لیے بغیر کہا کہ انہوں نے اپنی پوری زندگی میں ادنیٰ لوگوں کو بڑے بڑے عہدوں پر قابض ہوتے دیکھا ہے ،ْیہ لوگ بصارت سے عاری اور دوراندیشی سے یکسر محروم ہوتے ہیں۔واضح رہے کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے لیے نیویارک پہنچ گئے ہیں جہاں وہ دیگر ممالک کے وزرائے خارجہ سے ملاقاتیں بھی کریں گے۔