یوم عاشور پر سکیورٹی انتظامات،وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کا مرکزی کنٹرول روم اورپنجاب سیف سٹی اتھارٹی کا دورہ

جلوسوں اور مجالس کی نگرانی اور سکیورٹی انتظامات کا معائنہ کیا ، کنٹرول روم اورا ینٹی گریٹڈ کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹرکے مختلف شعبے دیکھے ہیلی کاپٹروں کی مدد سے فضائی نگرانی،دشمن کے ناپاک عزائم ناکام بنانے کیلئے پوری فورس چوکس ہے، امن و امان برقرار رکھنے کیلئے بہترین انتظامات کئے، جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ کرتے ہوئے سرویلنس کا نظام وضع کیا گیا سیف سٹی پراجیکٹ کا دائرہ کار ہر ڈویژنل ہیڈ کوراٹر تک بڑھائیں گے ،ڈی جی خان کو سیف سٹی پراجیکٹ میں ترجیح دی جائیگی‘عثمان بزدار

ہفتہ ستمبر 18:37

یوم عاشور پر سکیورٹی انتظامات،وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کا مرکزی کنٹرول ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 ستمبر2018ء) وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے یوم عاشور پر سکیورٹی انتظامات کا جائزہ لینے کے لئے سول سیکرٹریٹ میں مرکزی کنٹرول روم اور قربان لائنز میںپنجاب سیف سٹی اتھارٹی کے ہیڈ آفس کا دورہ کیا۔وزیر اعلیٰ نے محکمہ داخلہ کے مرکزی کنٹرول روم میں یوم عاشور پر جلوسوں اور مجالس کی نگرانی اور سکیورٹی انتظامات کا معائنہ کیا اور کنٹرول روم کے مختلف شعبے دیکھے۔

وزیر اعلیٰ سردار عثمان بزدار نے اس موقع پر کہا کہ یوم عاشور پر پنجاب حکومت نے امن و امان برقرار رکھنے کیلئے بہترین انتظامات کئے ہیں۔یوم عاشور پر جلوسوں اور مجالس کی نگرانی کے لئے جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ کرتے ہوئے سرویلنس کا نظام وضع کیا گیا ہے اور دشمن کے ناپاک عزائم ناکام بنانے کیلئے پوری فورس چوکس ہے، جبکہ ہیلی کاپٹروں کی مدد سے فضائی نگرانی بھی کی جارہی ہے۔

(جاری ہے)

انہوں نے ہدایت کی کہ پولیس اور انتظامیہ وضع کردہ سکیورٹی پلان پر ہر صورت عملدرآمد یقینی بنائیں اور جلوس پر امن طور پر منتشر ہونے تک ڈیوٹی پر موجود رہیں۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ اشتعال انگیز تقاریر کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی تسلسل کے ساتھ جاری رکھی جائے اورقابل اعتراض مواد کی اشاعت و تقسیم پربلاامتیاز کارروائی کی جائے اور اسی طرح ضابطہ اخلاق کی پابندی پر عملدرآمد ہر صورت یقینی بنایا جائے۔

وزیر اعلیٰ کو کنٹرول روم میںپنجاب بھر میں یوم عاشور پر کئے جانے والے سکیورٹی انتظامات کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی گئی اور بتایا گیا کہ پنجاب میں آج تقریبا 2800 جلوس اور 2100 کے قریب مجالس کو فول پروف سکیورٹی فراہم کرنے کے انتظامات کئے گئے ہیں اور اس مقصد کے لئے پنجاب بھر میں 2لاکھ 15ہزار پولیس افسران اور اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے ۔

وزیر اعلی کو مزیدبتایا گیا کہ پولیس کے ساتھ فوج اور رینجرز کو بھی معاونت کے لئے طلب کیا گیا ہے۔ فوج کے 10 ہزار افسرو جوان اور رینجرز کے 1900 جوان یوم عاشور پر امن و امان کی فضا برقرار رکھنے کے لئے موجود ہیں جبکہ پنجاب حکومت نی4ہیلی کاپٹرز کی خدمات بھی لی ہیں۔وزیر اعلی مرکزی کنٹرول روم کا دورہ کرنے کے بعد پنجاب سیف سٹی اتھارٹی کے ہیڈ آفس گئے جہاں انہوں نے اینٹی گریٹڈ کمانڈ ، کنٹرول اینڈ کمیونیکیشن سنٹر کے مختلف حصے دیکھے اور وزیر اعلیٰ نے سی سی ٹی وی کیمروں کی مدد سے یوم عاشور کے جلوس کے مرکزی روٹ کا جائزہ لیا اور ضروری ہدایات جاری کیں۔

وزیر اعلیٰ نے یوم عاشور پر سی سی ٹی وی کیمروں سے جلوسوں کی مانیٹرنگ کے نظام کا بھی بغور جائزہ لیا۔وزیر اعلیٰ نے اس موقع پر بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یوم عاشور کے جلوسوں کو فول پروف سکیورٹی فراہم کرنے میں جدید ٹیکنالوجی اہم کردار ادا کر رہی ہے اورملک دشمن عناصر پر کڑی نظر رکھنے کیلئے یہ نظام کلیدی اہمیت رکھتا ہے۔ وزیراعلیٰ نے جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے جرائم کی روک تھام کے لئے کئے جانے والے اقدامات کو وقت کی ضرورت قرار دیتے ہوئے کہاکہ جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے پولیسنگ نظام میں مثبت تبدیلی لانا وقت کا تقاضا ہے اورجدید ٹیکنالوجی کا استعمال جدید دور کی ضرورت ہی-وزیر اعلیٰ نے کہا کہ سیف سٹی پراجیکٹ کا دائرہ کار ہر ڈویژنل ہیڈ کوراٹر تک بڑھائیں گے اورجنوبی پنجاب کے ڈویژنز کو ترجیح دی جائے گی۔

انہوں نے کہاڈیرہ غازی خان تین صوبوں کے سنگم پر واقع ہے لہذاڈی جی خان کو سیف سٹی پراجیکٹ میں ترجیح دی جائے گی۔ وزیر اعلی نے اس ضمن میں متعلقہ حکام کو پلان تیار کرنے کی ہدایت کی۔وزیر اعلی کو اینٹی گریٹڈ کمانڈ،کنٹرول اینڈکمیونی کیشن سنٹر میں کیمروں کی مدد سے جلوسوں کی نگرانی کے نظام کے بارے میں بریفنگ بھی دی گئی۔صوبائی وزراء راجہ بشارت، میاں اسلم اقبال، چیف سیکرٹری ، ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ، انسپکٹر جنرل پولیس اور متعلقہ حکام بھی اس موقع پر موجود تھے۔