کل سے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر شہریوں کو گھروں میں ای چالان موصول ہونگے

ای چالان پر ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کی تصاویر بھی دیکھی جا سکیں گی،جرمانے اور سزائیں موٹر وہیکل آرڈیننس ورولز کے تحت ہونگے مال روڈ پرسفر کرنے والوں کیلئے ہیلمٹ کی پابندی لازمی قرار ،مال روڈ سے ملحقہ تمام شہرائوں پر ٹریفک پولیس کے ناکے لگائیں جائینگے

ہفتہ ستمبر 20:30

کل سے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر شہریوں کو گھروں میں ای چالان موصول ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 ستمبر2018ء) پنجاب سیف سٹی اتھارٹی نے لاہور ہائیکورٹ کی ہدایات کے مطابق ای چلاننگ کا آغازکر دیا ، ( پیر)سے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر شہریوں کو گھروں میں ای چالان موصول ہوں گے۔ ترجمان کے مطابق پنجاب سیف سٹی اتھارٹی اورلاہور سٹی ٹریفک پولیس کے اشتراک سے الیکٹرانک چلاننگ کا آغاز کیا گیا ہے ۔ای چالان پر ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کی تصاویر بھی دیکھی جا سکیں گی۔

ٹریفک قوانین کی خلاف ورز ی پر جرمانے اور سزائیں موٹر وہیکل آرڈیننس ورولزکے تحت ہونگی۔ترجمان کے مطابق ابتدائی طور پر جرمانہ بنک آف پنجاب میں جمع ہو گا جبکہ جرمانے کی رقم جمع کروانے کے لیے نیشنل بینک آف پاکستان کو بھی سسٹم میں شامل کیا جا رہا ہے۔جرمانہ دس دن کی مقررہ مدت میں ادا کرنا لازمی ہوگا۔

(جاری ہے)

مسلسل خلاف ورزی اور جرمانہ ادانہ کرنے کی صورت میں گاڑی کو قبضے میں لیا جاسکتا ہے۔

ترجمان کے مطابق سیف سٹی اتھارٹی کے تحت ٹریفک مینجمنٹ اینڈ مانیٹرنگ کا نظام دن رات کام کر رہا ہے۔گاڑی کے مالک کے علاوہ اگر کوئی اور گاڑی چلا رہا ہو گا تو چالان گاڑی کے مالک کے پتہ پر ہی ارسال کیا جائے گا ۔گاڑی کو فروخت کرنے کی صورت میں دستاویزات کی تبدیلی کے وقت جرمانوں کی ادائیگی ضروری ہو گی ۔اسی طرح دوسرے شہروںسے آنے والی گاڑیوں کے لئے بھی نظام لایا گیا ہے۔

ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے پر موٹر سائیکل سواروں کیلئے 200سے 300روپے، موٹر کار اور جیپ وغیرہ کو 200سی500جبکہ پبلک سروس وہیکلز اور پرائیویٹ یا پبلک کیرئیر کو 500سے 1000تک کا جرمانہ ادا کرنا ہو گا۔پنجاب سیف سٹی اتھارٹی کی جانب سے انتباہ کیا گیا ہے کہ غیر مجاز نمبر پلیٹ تیار کرنا اور اس کا استعمال کرنا جرم ہے ، جھوٹ اور دھوکہ دہی سے ڈاک کو وصول نہ کرنا قانونی اور اخلاقی جرم سمجھا جائے گا ۔

علاوہ ازیں لاہور ہائیکورٹ کے حکم پر مال روڈ پر کل ( پیر) سے تمام موٹر سائیکل سواروں کیلئے ہیلمٹ کی پابندی بھی لازمی ہو گی ۔چوبیس ستمبر سے بغیر ہیلمٹ کوئی بھی موٹر سائیکل سوار مال روڈ پر نہیں آسکے گا ۔مال روڈ سے ملحقہ تمام شہرائوں پر ٹریفک پولیس کے ناکے لگائیں جائیں گے ۔مال روڈ پر 32مقامات پر بیریئر لگا کر چیکنگ کی جائے گی ،عدالتی حکم کے مطابق ہیلمٹ نہ پہننے والوں کیخلاف کریک ڈائون کیا جائے گا ،ابتدائی طور پر مال روڈ اور پھر ایک ہفتہ بعد تمام ماڈل روٹس پر ہیلمٹ کی پابندی کو یقینی بنایا جائے گا ۔

ہیلمٹ استعمال نہ کرنے والوں کو ماڈل روٹس پر چلنے کی اجازت نہیں ہو گی ، ہیلمٹ نہ پہننے والوں کیخلاف کارروائی نہ کرنے پر ڈی ایس پی کیخلاف کاروائی کی جائے گی۔استنبول چوک ، جی پی او چوک اور ریگل چوک پر بغیر ہیلمٹ کراسنگ نہیں ہو سکے گی ،گورنر ہائوس اور فیصل چوک پر بھی بغیر ہیلمٹ موٹر سائیکل سوار گزر نہیں سکیں گے ۔حج ٹرمینل سے پی ایم جی چوک تک کوئی موٹر سائیکل سوار بغیر ہیلمٹ نہیں گزرے گا ۔بغیر ہیلمٹ موٹر سائیکل سواروں کو بھاری جرمانے کیے جائیں گے ۔