آصف علی زرداری اور فریال تالپور کے 33 نئے مشکوک اکاﺅنٹس کا انکشاف

334 افراد رقوم کی منتقلیوں اور 210 کمپنیاں مشکوک ٹرانزیکشنز میں ملوث ہیں. سربراہ جے آئی ٹی

Mian Nadeem میاں محمد ندیم پیر ستمبر 12:50

آصف علی زرداری اور فریال تالپور کے 33 نئے مشکوک اکاﺅنٹس کا انکشاف
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔24 ستمبر۔2018ء) سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کے خلاف جعلی بینک اکاﺅنٹس کیس میں مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) نے 33 نئے مشکوک اکاﺅنٹس کا انکشاف کیا ہے. جعلی بینک اکاﺅنٹس کیس میں آصف علی زرداری، ان کی ہمشیرہ فریال تالپور سمیت دیگر ملزمان نامزد ہیں جن کے خلاف 35 ارب روپے کی مشکوک ٹرانزیکشنز کا الزام ہے.سپریم کورٹ نے 5 ستمبر کو جعلی بینک اکاﺅنٹس کی تحقیقات کے لیے جے آئی ٹی تشکیل دینے کا حکم دیا تھا.چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے جعلی بینک اکاﺅنٹس کیس کی سماعت کی.

(جاری ہے)

جے آئی ٹی کے سربراہ احسان صادق نے عدالت کو بتایا کہ 29 اکاﺅنٹس کی ازسرنو تحقیقات کی گئی اور اس دوران 33 نئے مشکوک اکاﺅنٹس برآمد ہوئے ہیں.انہوں نے بتایا کہ 334 افراد رقوم کی منتقلیوں اور 210 کمپنیاں مشکوک ٹرانزیکشنز میں ملوث ہیںاحسان صادق نے دعویٰ کیا کہ 47 کمپنیوں کا تعلق اومنی گروپ سے ہے.جس پر چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ چوروں کے پیسے کو جائز بنانے کے لئے کوشش کی گئی، یہ رقوم تھوڑی نہیں ہے.چیف جسٹس نے اومنی گروپ کے اکاﺅنٹس افسر عارف کے بارے میں استفسار کیا.جس پر سربراہ جے آئی ٹی نے بتایا کہ وہ بیرونی ملک ہیں اور جعلی بنک اکاﺅنٹس کیس میں ملوث مفرور ملزمان کے لئے انٹرپول سے رابطے کر رہے ہیںاحسان صادق نے بتایا کہ اومنی گروپ کی 16 شوگر ملیں ہیں.انہوں نے بتایا کہ معلومات اکٹھا کرنے کے لیے سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن پاکستان (ایس ای سی پی) اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان سے مدد لی، سینکڑوں منتقلیوں کی فہرست بڑا ٹاسک ہے.چیف جسٹس نے اومنی گروپ کے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ گھر بیچ کر جے آئی ٹی کو اخراجات کی مد میں پیسے دیں.جس اومنی گروپ کے وکیل نے کہا کہ اثاثے اور بینک اکاﺅنٹس منجمند ہیں.چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ سپریم کورٹ کے حکم کے بغیر اسپیشل کورٹ کوئی حکم نہیں دے سکتی، عدالت سے باہر تفتیشی کو مقدمے میں شامل تفتیش کرنے کی بات کہنا درست نہیں ہے.چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ خصوصی عدالت جعلی بنک اکاﺅنٹس سے متعلق سپریم کورٹ کو آگاہ کئے بغیر کوئی حکم جاری نہ کرے. عدالت نے کیس کی مزید سماعت 10 روز کے لیے ملتوی کردی.