مشترکہ مفادات کونسل ،ْگزشتہ حکومت کے تمام ایل این جی معاہدے سامنے لانے کا فیصلہ

صوبائی وزرائے اعلیٰ نے مختلف تجاویز اور مسائل سے وزیراعظم عمران خان کو آگاہ کیا وفاق تمام اہم قومی معاملات پر صوبوں کو ساتھ لے کر چلے گا ،ْ وفاقی و صوبائی حکومتوں میں مضبوط رابطوں اور ہم آہنگی سے ملک ترقی کریگا ،ْوزیر اعظم وسائل کی شفاف تقسیم اور اس کی نچلی سطح تک منتقلی ہر صورت یقینی بنائیں گے اور ملکی ترقی کے ثمرات عوام تک پہنچائیں گے ،ْعمران خان کی یقین دہانی اجلاس میں وفاق اور صوبائی فوڈ اتھارٹیز کیلئے یکساں قوانین بنانے کا فیصلہ ،ْ ملک بھر میں قومی صفائی مہم شروع کرنے کا اتفاق صفائی مہم کیلئے وزارت صوبائی رابطہ امور کی تجویز منظور ، صفائی کانظام مستقل بنیادوں پرجاری رکھنے کیلئے صوبوں کو انتظامات کی ہدایت دی

پیر ستمبر 19:08

مشترکہ مفادات کونسل ،ْگزشتہ حکومت کے تمام ایل این جی معاہدے سامنے لانے ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 ستمبر2018ء) وفاقی حکومت نے گزشتہ دور حکومت میں کیے جانے والے ایل این جی کے تمام معاہدے سامنے لانے فیصلہ کیا ہے۔وزیراعظم ہاؤس میں وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ، وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار، وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان اور وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال سمیت کونسل کے دیگر اراکین نے شرکت کی۔

نجی ٹی وی کے مطابق اجلاس کے دوران وفاق اور صوبوں کے درمیان 18ویں ترمیم کے بعد تقسیم شدہ امور پر تفصیلی بات چیت ہوئی ،ْ صوبائی وزرائے اعلیٰ نے مختلف تجاویز اور مسائل سے وزیراعظم کو آگاہ کیا۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے وزرائے اعلیٰ کو یقین دہانی کرائی کہ وفاق تمام اہم قومی معاملات پر صوبوں کو ساتھ لے کر چلے گا اور وفاقی و صوبائی حکومتوں میں مضبوط رابطوں اور ہم آہنگی سے ملک ترقی کریگا۔

(جاری ہے)

ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ صوبوں کو مزید خود مختار بنانا چاہتے ہیں اور صوبوں کی ترقی کیلئے انقلابی پروگرام رکھتے ہیں۔وزیراعظم نے یقین دلایا کہ وسائل کی شفاف تقسیم اور اس کی نچلی سطح تک منتقلی ہر صورت یقینی بنائیں گے اور ملکی ترقی کے ثمرات عوام تک پہنچائیں گے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے شرکاء کو مقامی حکومتوں کے نئے نظام اور جامع اصلاحات کے بارے میں بھی اعتماد میں لیا۔

ذرائع نے بتایا کہ دوران اجلاس وزیراعظم اس عزم کا اظہار کیا کہ کراچی کو پانی کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے تمام وسائل بروئے کارلائیں گے۔وزیراعظم نے کراچی کو 1200 کیوسک اضافی پانی دینے کیمعاملے پر تجاویز فوری طلب کرلی ہیں ،ْ صوبائی حکومت اور وزارت آبی وسائل سے تجاویز طلب کی گئی ہیں۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں وفاق اور صوبائی فوڈ اتھارٹیز کیلئے یکساں قوانین بنانے کا فیصلہ کیا گیا اور ملک بھر میں قومی صفائی مہم شروع کرنے کا اتفاق کیا گیا ہے، صفائی مہم کیلیے وزارت صوبائی رابطہ امور کی تجویز منظور کرلی گئی ہے، صفائی کانظام مستقل بنیادوں پرجاری رکھنے کیلئے صوبوں کو انتظامات کی ہدایت دی گئی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں بلوچستان میں توانائی کے منصوبوں، صوبائی ضروریات اور وسائل کے معاملے پر غور کیا گیا، اس کے علاوہ ایل این جی کی درآمد، خریداری، قیمت پر وفاق اور سندھ کے تحفظات کاجائزہ لیاگیا۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں گذشتہ دور میں ایل این جی درآمد کے تمام معاہدے سامنے لانے، ای او بی آئی اور ورکرز ویلفیئر بورڈ کے معاملات کے حل کیلئے کمیٹی بنانیکا فیصلہ کیا گیا جو وفاق اور صوبوں کے نمائندوں پر مشتمل ہوگی۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں پیٹرولیم پالیسی 2012 میں ترمیم کے معاملے پر صوبوں کی آراء لینے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔