کسٹمز انٹیلی جنس نے سینیٹر سیف الرحمان کے ویئر ہاؤس سے 20 قیمتی گاڑیاں برآمد کرلیں

گاڑیاں قطری شیخ جاسم بن حمد کی ہیں، جو صحرا میں شکار کے لیے لائی گئی ہیں، ان کی کلیئرنس دفتر خارجہ کے ذریعے ہوتی ہے ،ْسیف الرحمن اسلام آباد، لاہور اور کراچی میں سیف الرحمان کی پاس ہماری 26 گاڑیاں موجود ہیں ،ْقطری سفارتخانہ

منگل ستمبر 16:23

کسٹمز انٹیلی جنس نے سینیٹر سیف الرحمان کے ویئر ہاؤس سے 20 قیمتی گاڑیاں ..
راولپنڈی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 ستمبر2018ء) کسٹمز انٹیلی جنس نے روات کے قریب مسلم لیگ (ن) کے سابق سینیٹر سیف الرحمان کے ویئر ہاؤس سے 20 قیمتی گاڑیاں برآمد کرلیں۔کسٹمز انٹیلی جنس ذرائع کے مطابق گزشتہ رات کو روات کے قریب وئیر ہاؤس پر چھاپہ مارا گیا اور اس دوران 20 قیمتی گاڑیاں برآمد کرلی گئیں، برآمد گاڑیوں کا تعلق قطر کے سفارت خانے سے بتایا گیا تاہم سفارتخانے کا عملہ گاڑیوں کے کاغذات فراہم نہیں کرسکاجس کے باعث تمام گاڑیاں ویئر ہاؤس میں ہی سیل کردی گئیں۔

ذرائع کے مطابق یہ گاڑیاں تلور کے شکار میں استعمال ہوتی ہیں ،ان گاڑیوں کو یہاں سے ہر سال صحرائی علاقوں میں منتقل کیا جاتا ہے۔ویئرہاؤس کے مالک سابق سینیٹر سیف الرحمان نے دوحا سے نجی ٹی و ی کو بتایا کہ ان کے ہاں کوئی غلط کام نہیں ہوا، ہماری جگہ صرف اسٹوریج کیلئے استعمال ہو رہی ہے، یہ تمام گاڑیاں چار پانچ سال سے یہاں موجود ہیں، گاڑیاں قطری شیخ جاسم بن حمد کی ہیں، جو صحرا میں شکار کے لیے لائی گئی ہیں، ان کی کلیئرنس دفتر خارجہ کے ذریعے ہوتی ہے۔

(جاری ہے)

دوسری جانب قطری سفارتخانے نے روات سے برآمد گاڑیوں کی ملکیت کی تصدیق کرتے ہوئے تفصیلات جاری کردی ہیں ،ْ قطری سفارتخانے کا کہنا ہے کہ اسلام آباد، لاہور اور کراچی میں سیف الرحمان کی پاس ہماری 26 گاڑیاں موجود ہیں، گاڑیاں سابق قطری وزیراعظم شیخ حمد بن جاسم نے شکار کیلئے قانونی طور پر منگوائیں۔