پبلک اکاونٹس کمیٹی اپوزیشن کو دینے کا فیصلہ

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے سربراہ شہباز شریف ہوں گے

Syed Fakhir Abbas سید فاخر عباس منگل ستمبر 21:50

پبلک اکاونٹس کمیٹی اپوزیشن کو دینے کا فیصلہ
اسلام آباد(اردوپوائنٹ تازہ ترین اخبار-03ستمبر 2018ء) : حکومت نے پارٹی ارکان کے تحفظات کے باوجود پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اپوزیشن کو دینے کا فیصلہ کیا ہے جس کے چیئرمین حزب اختلاف کے سربراہ شہباز شریف ہوں گے۔ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن جو سابقہ حکمران جماعت ہے،اس مرتبہ اپوزیشن میں بیٹھی ہوئی ہے۔مسلم لیگ ن کے صدر میاں محمد شہباز شریف اس وقت قومی اسمبلی میں پاکستان کی دوسری بڑی سیاسی جماعت کے سربراہ ہونے کے ساتھ ساتھ اپوزیشن لیڈر بھی ہے۔

عموما پبلک اکاونٹس کمیٹی کی سربراہی اپوزیشن لیڈر کو ملتی ہے تاہم پبلک اکاونٹس کمیٹی کی سربراہی بھی شہباز شریف کو نہ دئیے جانے کا امکان تھا۔اس حوالے سے تازہ ترین خبر یہ ہے کہ آج اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیرصدارت پارلیمانی رہنماؤں کا اجلاس ہوا جس میں پی اے سی اور قائمہ کمیٹیوں کی تشکیل اور پارلیمانی کارروائی پر مشاورت کی گئی۔

(جاری ہے)

اجلاس میں کمیٹیوں کے پرانے کوٹے اور طریقہ کار کو برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا گیا جس کے تحت اپوزیشن کو 16 اور حکومت کو 17 قائمہ کمیٹیوں کی سربراہی ملے گی۔ حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت مسلم لیگ ن کو نو، پاکستان پیپلز پارٹی کو چھ اورمتحدہ مجلس عمل کو ایک قائمہ کمیٹی کی سربراہی ملے گی۔ حکومتی فیصلہ کے بعد قائمہ کمیٹیوں کا نوٹیفکیشن آئندہ تین روز میں جاری کردیا جائے گا۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم اورنگزیب نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے سربراہ شہباز شریف ہوں گے۔تاہم آج ن لیگ کی مشترکہ پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں طے کیا گیا ہے کہ شہباز شریف تین ماہ تک پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے سربراہ رہیں گے جس کے بعد ایاز صادق یا خواجہ آصف کو کمیٹی کا سربراہ بنا دیا جائے گا۔