بھارت سے معاملات بگاڑنے کے لیے محض دو جملے چاہئیں ،ْ

صورتحال مزید بگاڑنا نہیں چاہتے ،ْوزیر خارجہ پاکستان نے ہمیشہ قیام امن کی حمایت کی ہے ،ْ قیام امن کیلئے جدید وسائل کی فراہمی وقت کی ضرورت ہے ،ْ شاہ محمود قریشی جدید پیس کیپنگ کو متعدد چیلنجز کا سامنا ہے، ہمیں پیس کیپنگ میں توازن قائم کرنے کی ضرورت ہے ،ْ تحریک انصاف کی حکومت کرپشن کے خاتمے اورقانون کی حکمرانی کا عزم رکھتی ہے ،ْخطاب

بدھ ستمبر 15:03

بھارت سے معاملات بگاڑنے کے لیے محض دو جملے چاہئیں ،ْ
نیویارک(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 ستمبر2018ء) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہاہے کہ بھارت سے معاملات بگاڑنے کیلئے محض دو جملے چاہئیں لیکن وہ صورتحال کو مزید خراب نہیں کرنا چاہتے ،ْپاکستان نے ہمیشہ قیام امن کی حمایت کی ہے، قیام امن کے لیے جدید وسائل کی فراہمی وقت کی ضرورت ہے ،ْتحریک انصاف کی حکومت کرپشن کے خاتمے اورقانون کی حکمرانی کا عزم رکھتی ہے۔

بھارتی میڈیا سے گفتگو میں شاہ محمود قریشی نے وزرائے خارجہ ملاقات کی منسوخی کے بعد جاری لفظی جنگ کے حوالے سے کہا کہ بھارت سے معاملات بگاڑنے کیلئے محض دو جملے چاہئیں لیکن میں صورتحال کو مزید خراب نہیں کرنا چاہتا۔وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم امن کے داعی ہیں اور بہتری چاہتے ہیں ،ْپاکستان نے ہمیشہ قیام امن کی حمایت کی ہے، قیام امن کے لیے جدید وسائل کی فراہمی وقت کی ضرورت ہے۔

(جاری ہے)

نیو یارک میں ایکشن فار پیس کیپنگ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان نے گزشتہ 5 دہائیوں میں یو این مشن کے لیے 2 لاکھ سے زائد اہلکار بھیجے، پاکستانی مرد اور خواتین نے یو این امن مشنز کے لیے 46 ملکوں میں کام کیا۔شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ جدید پیس کیپنگ کو متعدد چیلنجز کا سامنا ہے، ہمیں پیس کیپنگ میں توازن قائم کرنے کی ضرورت ہے۔

شاہ محمود قریشی نے اٹلانٹک کونسل کی تقریب سے خطاب کے دوران کہا کہ حکومت بزنس دوست پالیسیوں پرعمل پیرا ہے، ہرسال لاکھوں نوجوانوں کوروزگار کے مواقع فراہم کرنا حکومت کی ترجیح ہے، پاکستان میں بہت سی کثیر الاقوامی کمپنیاں دہائیوں سے منافع بخش کاروبار کر رہی ہیں۔وزیرخارجہ نے کہا کہ پاکستانی عوام نے 25 جولائی کو تبدیلی کے حق میں ووٹ دیا، تحریک انصاف کی حکومت کرپشن کے خاتمے اور قانون کی حکمرانی کا عزم رکھتی ہے اوروزیراعظم عمران خا ن علاقائی امن و استحکام کیلئے پڑوسی ممالک سے رابطے کررہے ہیں۔