بد عنوانی جڑ سے اکھاڑ پھینکیں گے ،ْ پاکستان میں کاروبار کے لئے غیر ملکی کمپنیوں کے لئے صورتحال میں مزید بہتری لائی جائے گی ،ْوزیر خارجہ شاہ محمود قریشی

وزیر خارجہ کی قطری ہم منصب سے ملاقات ،ْ دوطرفہ تعلقات سمیت باہمی دلچسپی کے امورپر تبادلہ خیال مشترکہ مقاصد کے حصول کے لئے اپنی کاوشوں میں وسعت پیدا کرنے کی ضرورت ہے ،ْملاقات میں اتفاق

بدھ ستمبر 16:45

بد عنوانی جڑ سے اکھاڑ پھینکیں گے ،ْ پاکستان میں کاروبار کے لئے غیر ملکی ..
نیویارک (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 ستمبر2018ء) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے واضح کیا ہے کہ بد عنوانی جڑ سے اکھاڑ پھینکیں گے ،ْ پاکستان میں کاروبار کے لئے غیر ملکی کمپنیوں کے لئے صورتحال میں مزید بہتری لائی جائے گی۔وہ گزشتہ روز امریکی تھنک ٹینک انٹلانٹک کونسل کے زیراہتمام کاروباری رہنمائوں، تجزیہ کاروں اور ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کے اجتماع سے خطاب کررہے تھے وزیرخارجہ نے کاروبار دوست پاکستان کے لئے نئی حکومت کا ویژن پیش کرتے ہوئے کہا کہ لاکھوں پاکستانی نوجوان کے لئے روزگار کے مواقع پیدا کرنا حکومت کی ترجیح ہے۔

شاہ محمود قریشی نے شرکاء کو پاکستان میں سرمایہ کاری کے ماحول اور مواقع سے آگاہ کرتے ہوئے کہاکہ پاکستان متوسط طبقے کی بہت بڑی مارکیٹ ہے اور یہاں وافر نوجوان افرادی قوت موجود ہے۔

(جاری ہے)

چین، وسطی اور جنوبی ایشیا کے سنگم پر واقع ہونے کی بنیاد پر شاندار مواقع پائے جاتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ پاکستان میں کاروبار کے لئے غیر ملکی کمپنیوں کے لئے صورتحال میں مزید بہتری لائی جائے گی۔

کئی مشہور کثیر القومی کارپوریشنیں اور بین الاقوامی فرنچائز کمپنیاں پہلے سے کام کررہی ہیں اور کئی عشروں سے منافع بخش کاروبار کررہی ہیں۔ وزیرخارجہ نے خاص طورپر ٹیلی نار گروپ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر اور صدر سگوی بریکی کا شکریہ ادا کیا جو پاکستان کی سرمایہ کاری کی صلاحیت کے بارے میں اظہار خیال کے لئے ناروے سے آئے تھے۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے خارجہ تعلقات کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے جنوبی ایشیا میں امن واستحکام کے حصول کے لئے ہمسایہ ممالک کے ساتھ فعال رابطے کے حوالے سے وزیراعظم عمران خان کی سوچ کااظہار کیا۔

انہوں نے حکومت کے ترقیاتی ایجنڈے کے حصول کے لئے سرمایہ کاری راغب کرنے کے ضمن میں حکمت عملی کابھی خاص طورپر ذکر کیا۔وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 73 ویں اجلاس کے موقع پر یو این پیس کیپنگ آپریشنز کے حوالے سے ایک اجلاس کے دوران کہا کہ اقوام متحدہ کے امن مشنز کی کامیابی ان مشنز میں شامل مردو خواتین اہلکاروں کی قربانیوں کا نتیجہ ہے ،ْہم امن کے لئے جانوں کے نذرانے پیش کرنے والے ان اہلکاروں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔

وزیر خارجہ نے بتایا کہ پاکستان اقوام متحدہ کے امن مشنز کے لئے افرادی قوت فراہم کرنے والا ایک بڑا ملک ہے اور اس نے دنیا کے 46 ممالک میں تعینات امن مشنز کے لئے گزشتہ 6 عشروں کے دوران 2لاکھ سکیورٹی اہلکار فراہم کئے ہیں جن میں سے 156 بہادروں نے امن کے لئے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کئے ‘ وزیر خارجہ نے اس موقع پر اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوترش کے ایکشن فار پیس کیپنگ منصوبے (A4P) کا خیر مقدم کیا ور کہا کہ مختلف امن مشنز کے درمیان توازن قائم رکھنا ناگزیر ہے۔

مطلوبہ مقاصد کے حصول کے لئے اس منصوبے پر اس کی روح کے مطابق عملدرآمد ضروری ہے۔ وزیر خارجہ نے امن مشنز کی ریشنلائزنگ اور ان کے مینڈیٹ کو ترجیح دینے پر بھی زور دیا انہوں نے کہا کہ پاکستان نے ہمیشہ اقوام متحدہ کے امن دستوں کی کارکردگی بہتر بنانے کے لئے معاونت کی ہے وہ اس حوالے سے ڈکلریشن کی توثیق کرنے وال پہلا ملک ہے اور اس بات کا اعتراف خود سیکرٹری جنرل نے بھی کیا ۔

ا س موقع پر مشترکہ عزائم کے ڈیکلریشن کی بھی منظوری دی گئی۔ ڈیکلریشن میں متعلقہ اداروں بشمول یو این سیکرٹریٹ ‘ سلامتی کونسل ‘ جنرل اسمبلی ‘ امن دستوں کے لئے افرادی قوت فراہم کرنے والے ممالک ‘ تنازعات کا شکار ممالک ‘ فنڈز فراہم کرنے والے ممالک اور علاقائی تنظیموں نے اقوام متحدہ کے امن مشنز کے حوالے سے اپنی اپنی ذمہ داریوں کو احسن انداز میں ادا کرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

بعد ازاں اقوا م متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 73 ویں اجلاس کے موقع پر پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی سے ان کے قطری ہم منصب محمد بن عبدالرحمن الثانی نے ملاقات کی۔ اس موقع پر قطر کے وزیر خارجہ نے پاکستان میں انتخابات کے کامیاب انعقاد اور شاہ محمود قریشی کو بطور وزیر خارجہ تقرری پر مبارک باد دی۔ دونوں وزرائے خارجہ نے برادر اسلامی ممالک کے قریبی تعلقات کی ضرورت پر زور دیا۔

دفتر خارجہ سے جاری بیان کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے پاکستان اور قطر کی باہمی تجارت میں 53 فیصد اضافہ کو سراہا اور خوراک،تعمیراتی سامان، ادویات، طبی آلات، کھیلوں کے سامان اور کپڑے کی مصنوعات کی برآمدات میں اضافہ کے ذریعے دو طرفہ تجارت بڑھانے کی ضرورت پر زور دیا۔ پاکستان کے وزیر خارجہ نے تجویز پیش کی کہ قطر کا ایوان صنعت و تجارت پاکستان کا جلد دورہ کرے تاکہ مشترکہ کاروباری کونسل کو مزید مؤثر بنایاجا سکے ۔

اس موقع پر قطر کے وزیر خارجہ نے شاہ محمود قریشی کا شکریہ ادا کیا کہ ان کا ملک پاکستان کے ساتھ باہمی تعلقات میں فروغ کو بنیادی اہمیت دیتا ہے۔ انہوں نے اقتصادی رابطوں اورمعاشی شراکتداری کے ذریعے برادر ممالک کے تعلقات میں اضافہ کی پاکستانی وزیر خارجہ کی تجویز کو سراہا اور کہاکہ دونوں ممالک کے درمیان پہلے سے موجود اداروں کے رابطوں میں اضافہ بنیادی ضرورت ہے تاکہ تجارتی تعلقات کو نئی بلندیوںتک وسعت دی جاسکے۔ پاکستان اور قطر مسلمان ممالک میں انتہائی اہم سمجھے جاتے ہیں اور ان کو مشترکہ مقاصد کے حصول کے لئے اپنی کاوشوں میں وسعت پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔