جسٹس شوکت صدیقی کوعہدے سے ہٹانےکی سفارش

جسٹس شوکت صدیقی پرعدلیہ اور اداروں کو بے جا تنقیدی نشانہ بنانے کا الزام تھا، سپریم جوڈیشل کونسل کی عہدے سے ہٹانے کی سفارش، جسٹس شوکت صدیقی کو ہٹانے کا حتمی فیصلہ صدرمملکت کریں گے

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ جمعرات اکتوبر 17:19

جسٹس شوکت صدیقی کوعہدے سے ہٹانےکی سفارش
اسلام آباد(اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 اکتوبر 2018ء) سپریم جوڈیشل کونسل نے اسلام آباد کے سینئرجج جسٹس شوکت عزیز صدیقی کو عہدے سے ہٹانے کی سفارش کردی، جسٹس شوکت صدیقی پرعدلیہ اور اداروں کو بے جا تنقیدی نشانہ بنانے کا الزام تھا۔ تفصیلات کے مطابق سپریم جوڈیشل کونسل نے جسٹس شوکت صدیقی کے حوالے سے فیصلہ دے دیا ہے،سپریم جوڈیشل کونسل نے جسٹس شوکت صدیقی کو عہدے سے ہٹانے کی سفارش کردی ہے۔

سپریم جوڈیشل کونسل نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے سینئر جج جسٹس شوکت صدیقی کو عہدے سے ہٹانے کی سفارش صدرمملکت کو بھجوا دی ہے۔ جسٹس شوکت صدیقی نے جولائی کے آخری ہفتے میں راولپنڈی بار سے خطاب کرتے ہوئے عدلیہ اور اداروں کو الزامات عائد کیے تھے۔جس پرجسٹس شوکت صدیقی کیخلاف سپریم جوڈیشل کونسل میں میں انکوائری کیلئے درخواست دائر کی گئی تھی۔

(جاری ہے)

جسٹس شوکت نے اپنی متنازع تقریر میں اداروں پرججوں پر من مانے فیصلوں کیلئے دباؤ ڈالنے اورمن پسند ججز کی مختلف کیسز میں نامزدگی کیلئے بھی دباؤ ڈالنے کے الزامات عائد کیے تھے۔انہوں نے کہا کہ مختلف کیسز میں من پسند ججز کی تقرری کیلئے چیف جسٹس پر بھی دباؤ ڈالا جاتا ہے۔ جس پرچیف جسٹس اسلام ہائیکورٹ نے جسٹس شوکت عزیز صدیقی کے الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا تھا۔

تاہم سپریم جوڈیشل کونسل نے جسٹس شوکت صدیقی کے خلاف اپنی حتمی سفارشات مرتب کرلی ہیں۔ سفارشات منظوری کیلئے صدرمملکت کو بھجوا دی گئی ہیں۔ سپریم جوڈیشل کونسل کی سفارشات پر صدرمملکت فیصلہ کریں گے کہ جسٹس شوکت صدیقی کو عہدے سے ہٹایا جائے یا نہیں۔جسٹس شوکت عزیز صدیقی کیخلاف گھرکی تزئین وآرائش کے سلسلے میں بھی ایک کیس سپریم جوڈیشل کونسل میں دائر ہے۔سپریم جوڈیشل کونسل میں کیس کی سماعت چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس ثاقب نثار کررہے ہیں۔