معیار پر سمجھوتہ کرنے والے ادارے اور قوموں پر دوسرے حاوی ہو جاتے ہیں‘پروفیسر نیاز احمد

آئی کیو ٹی ایم متعلقہ شعبہ میں پاکستان کا نمبر ایک اور پہلا ادارہ ہے جس کی کاوشوں کو ملک بھر میں سراہا جا رہا ہے‘وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی

جمعرات نومبر 19:20

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 نومبر2018ء) وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی پروفیسر نیاز احمد نے کہا ہے کہ معیار پر سمجھوتہ کرنے والی اقوام اور اداروں پر دیگر قومیں اور ادارے سبقت لے جاتے ہیں اورتمام شعبہ جات میں اعلیٰ معیار کو یقینی بنائے بغیر ہماری بقا ممکن نہیں۔ وہ پنجاب یونیورسٹی ادارہ کوالٹی اینڈ ٹیکنالوجی مینجمنٹ کے زیر اہتمام ورلڈ کوالٹی ڈے کی مناسبت سے منعقد کئے گئے سیمینار سے خطاب کر رہے تھے۔

سیمینار میں آئی کیو ٹی ایم کے ڈائریکٹر ڈاکٹر عثمان اعوان، سابق پروفیسر ڈاکٹر ناصر، احمد عمیر، فیکلٹی ممبران اور طلباء و طالبات کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر نیاز احمد نے کہا کہ ہمیں سروسز سیکٹر میں خدمات اور مینوفیکچرنگ سیکٹر میں پیداوار کے اعلیٰ معیار کو یقینی بنانا ہو گا۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ آئی کیو ٹی ایم اسی سوچ کے تحت انہوں نے پنجاب یونیورسٹی میں 2001 میں قائم کیا کہ دونوں شعبوں میں اعلیٰ معیار کو یقینی بنا کر ملک اور قوم کی ترقی کے لئے نئے راستے کھولے جائیں اور نئے مواقع میسر آئیں۔

انہوں نے کہا کہ آئی کیو ٹی ایم متعلقہ شعبہ میں پاکستان کا نمبر ایک اور پہلا ادارہ ہے جس کی کاوشوں کو ملک بھر میں سراہا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انتظامیہ اعلیٰ معیار کے گرایجوایٹس پیدا کرنے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے کیونکہ اب مقابلہ قومی کی بجائے بین الاقوامی سطح پر ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں تمام یونیورسٹیاں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہیں اور پنجاب یونیورسٹی نے حال ہی میںایشیا کی بہترین یونیورسٹیوں میں 39 درجہ ترقی کی ہے اور اب ہماری پوزیشن 232 سے بہتر ہو کر 193 ہو گئی ہے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر عثمان اعوان نے کہا کہ انتظامیہ پنجاب یونیورسٹی کو دنیا کی پانچ سو بہترین یونیورسٹیوں میں شامل کرنے کے لئے دن رات کوششیں کر رہی ہے جبکہ اگلے سال ہم پنجاب یونیورسٹی کو ایشیا کی سو بہترین یونیورسٹیوں میں لانے کے لئے کوشش کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ آئی کیو ٹی ایم کے انڈسٹریل انجینئرنگ پروگرام کو پاکستان کا نمبر ون تعلیمی پروگرام بنائیں گے۔ پروفیسر ناصر نے اپنے خطاب میں کہا کہ تحقیق کے کلچر کو فروغ دینا آسان کام نہیں ہے تاہم اعلیٰ تعلیمی معیار کو یقین بنانے کے لئے تمام رکاوٹوں کو دور کرنا ہو گا ۔ بعد ازاں مہمانوں کو یادگاری شیلڈز پیش کی گئیں۔