وزیر اعظم کی زیر صدارت اجلاس ،ْ میڈیا ہائوسز کے بقایات کی فوری ادائیگی کی ہدایت

ہم اشتہارات کے سیاسی فوائد کے حق میں نہیں ،ْاشتہارات پر حکومتی کنٹرول ختم کررہے ہیں ،ْ میرٹ سسٹم کے ذریعے تقسیم ہونگے ،ْ وزیر اطلاعات وزیر اعظم کی جانب سے میڈیا ہائوسز کی ادائیگیوں کا فیصلہ اہم ہے ،ْ میڈیا انڈسٹری پر مثبت اثرات مرتب ہونگے ،ْ ادائیگیوں کے نتیجے میں میڈیا ورکرز کو نکالنے کا سلسلہ روکنے میں مدد ملے گی ،ْچوہدری فواد حسین کی میڈیا کو بریفنگ

پیر نومبر 21:47

وزیر اعظم کی زیر صدارت اجلاس ،ْ میڈیا ہائوسز کے بقایات کی فوری ادائیگی ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 نومبر2018ء) وزیراعظم عمران خان نے میڈیا ہائوسز کے بقایات کی فوری ادائیگی کی ہدایت کردی ہے جبکہ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ ہم اشتہارات کے سیاسی فوائد کے حق میں نہیں ،ْاشتہارات پر حکومتی کنٹرول ختم کررہے ہیں ،ْ اشتہارات میرٹ سسٹم کے ذریعے تقسیم ہونگے ،ْ وزیر اعظم کی جانب سے میڈیا ہائوسز کی ادائیگیوں کا فیصلہ اہم ہے ،ْ میڈیا انڈسٹری پر مثبت اثرات مرتب ہونگے ،ْ ادائیگیوں کے نتیجے میں میڈیا ورکرز کو نکالنے کا سلسلہ روکنے میں مدد ملے گی ۔

پیر کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت میڈیا سے متعلق اہم اجلاس ہوا جس میں وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات چودھری فواد حسین ، وزیراعظم کے معاون خصوصی افتخار درانی ، وفاقی سیکرٹری اطلاعات شفقت جلیل ، صوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان ، صوبائی وزیر اطلاعات خیبرپختونخوا ، صوبائی سیکرٹری اطلاعات اور بلوچستان سے ڈی جی پی آر سمیت متعلقہ سیکرٹری انفارمیشن شریک ہوئے۔

(جاری ہے)

اجلاس کے دوران وزیراعظم عمران خان نے میڈیا کے بقایا جات فوری ادا کرنے کی ہدایت کی ۔ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اطلاعات ونشریات چودھری فواد حسین نے بتایا کہ وزیراعظم نے اجلاس کے دوران ہدایت کی کہ میڈیا کے بقایا جات کو فوری طور پر ریلیز کیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کے اعلان کی اہمیت اس لئے ہے کہ گزشتہ کچھ ہفتوں سے میڈیا سے لوگوں کو نکالا جارہاہے۔

انہوں نے کہا کہ ہماری کمٹمنٹ تھی کہ لوگوں کو روزگار دینگے، بیروزگاری سے بچنا ہمارا مقصد ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے فوری ریلیف کے طور پر وزیراعظم کی ہدایت پر فیصلہ کیا ہے کہ تینوں صوبوں اور وفاق میں میڈیا کے بقایا جات کلیئر کرنے کا پراسیس شروع کرینگے ۔ انہوں نے کہا کہ پچھلی حکومت نے جس طریقے سے اشتہارات کو ایک بطور اپنے سیاسی ہتھیار کے طورپر استعما ل کیا ہم اس کے حامی نہیں ہیں اور اس وقت میڈیا میں جو افرا تفری نظر آرہی ہے اس کی بنیادی وجہ بھی یہی ہے کہ پچھلی حکومت نے میڈیا کے ساتھ اشتہاری بازی کو ایک سیاسی ہتھیار کے طورپر استعمال کیا جس کی وجہ سے ایک پورے کا پورے میڈیا بزنس متاثر ہوا ۔

انہوںنے کہاکہ ہم میڈیا پالیسی میں توازن واپس لیکر لائیں گے ،ْکوئی بھی حکومت اس طرح کی اشتہاربازی کا سوچھ بھی نہیں سکتی جس طرح پچھلی حکومت نے کیا ہے ۔انہوںنے کہاکہ پاکستان کی تاریخ میں ہم نے پہلی بار سرکاری میڈیا پر سنسر شپ ختم کر دی اسی طرح ہم اشتہارات کے اوپر حکومت کا کنٹرول ختم کررہے ہیں اور ہم پراسیس بنا رہے ہیں جس کے ذریعے سرکاری اشتہارات وہ صرف حکومت کے کنٹرول میں نہیں ہونگے بلکہ وہ ایک میرٹ سسٹم کے ذریعے تقسیم کئے جائینگے ۔

انہوںنے کہاکہ مجھے امید ہے کہ اس فوری ریلیف سے میڈیا کے بڑے گروپس کے اندر ورکرز کو نکالے جانے کا سلسلہ فوری طورپر روکا جائیگا اور ہماری کوشش ہے کہ ورکز اور میڈیا کے ملازمین کی نوکریوں کا تحفظ کیا جاسکے اور ہماری میڈیا پالیسی انشاء اللہ عام صحافی کے ساتھ کندھا سے کندھا ملا کر کھڑا ہونا ہوگی ۔