اسٹیٹ بینک نےجعلسازی کاشکارکھاتےداروں کےلیےہیلپ لائن قائم کردی

جعلسازوں کی کال موصول ہونےپراسٹیٹ بینک کی ہیلپ لائن273-727-111پر کال کریں،ترجمان

Syed Fakhir Abbas سید فاخر عباس منگل نومبر 23:21

اسٹیٹ بینک نےجعلسازی کاشکارکھاتےداروں کےلیےہیلپ لائن قائم کردی
کراچی (اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔13 نومبر 2018ء) اسٹیٹ بینک نےفراڈ کاشکاربننے والے اکاونٹ ہولڈرز کےلیےہیلپ لائن قائم کردی۔اسٹیٹ بنک نے صارفین کو ہدایات کی ہے کہ جعلسازوں کی کال موصول ہونےپراسٹیٹ بینک کی ہیلپ لائن273-727-111پر کال کریں۔تفصیلات کے مطابق بنکنگ فراڈ عروج پر پہنچ چکا ہے۔نوسرباز کال کر کے اپنے شکار کا تعین کرتے ہیں۔ کال کی جانب موجود دوسرا شخص خود کا اسٹیٹ بنک آف پاکستان اور چیف جسٹس ثاقب نثاریا کا نمائندہ ظاہر کر تا ہے۔

اسکا کہنا ہوتا ہے کہ وہ چیف جسٹس ثاقب نثار اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے بات کر رہا ہے۔وہ یہ بھی کہتا ہے کہ چیف جسٹس ثاقب نثار کی جانب سے تمام تر بینک اکاونٹس کو جن کی تصدیق نہیں ہو رہی بند کرنے کا حکم دے دیا گیا ہے۔ہم نے آپ کے اکاونٹ کی تفصیلات دیکھیں ہیں اور آپ کا اکاونٹ تصدیق شدہ نہیں ہے اور ہم اس حوالے سے آپکا اکاونٹ بند کرنے جارہے ہیں تو آپ بتائیے کہ آپ اس اکاونٹ کو بند کرنا چاہتے ہیں یا اس کو جاری رکھنا چاہتے ہیں جس پر اگر کال موصول کرنے والا شخص کہے کہ وہ اپنا اکاونٹ ایکٹیویٹ رکھنا چاہتا ہے تو پھر کال پر دوسری جانب موجود شخص کال موصول کرنے والے شخص کو اپنے جال میں پھنسانے کی کوشش کرتا ہے اور اس سے اسکے اکاونٹ سے متعلق حساس معلومات طلب کرتا ہے تاکہ اس کا اکاونٹ ویری فائی ہو سکے ۔

(جاری ہے)

معلومات ملنے پر وہ اکاونٹ ہولڈر کو نشانہ بنا دیتا ہے۔اس حوالے سے تازہ ترین خبر ہے کہ اسٹیٹ بینک نےجعلسازی کاشکارکھاتےداروں کےلیےہیلپ لائن قائم کردی۔جعلسازوں کی کال موصول ہونےپراسٹیٹ بینک کی ہیلپ لائن273-727-111پر کال کریں۔اسٹیٹ بنک کے ترجمان کا کہنا تھا کہ فون پرذاتی تفصیلات فراہم کرنےسےگریزکریں۔خودکواسٹیٹ بینک کااہلکارظاہرکرنےوالےنوسربازوں کوذاتی معلومات نہ دیں۔

جعلسازی کےواقعات کےبارےمیں فوری قانون نافذکرنےوالےاداروں کوآگاہ کریں۔جعلسازوں کی جانب سےعوام کوباربارفون کالزموصول ہورہی ہیں۔نوسربازبینک ڈپازٹ سےمتعلق معلومات حاصل کرنےکی کوشش کرتےہیں۔انکا مزید کہنا تھا کہ کوئی مالیاتی ادارہ کھاتےداروں سےذاتی معلومات کاتقاضہ نہیں کرسکتا۔اس لئیے صارفین کسی کو اپنی ذاتی معلومات نہ دیں۔