علما کرام کا جمعہ کے روز چھٹی کا مطالبہ

صدرِ مملکت عارف علوی نے علمائے کرام کے مطالبے کی حمایت کر دی

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان ہفتہ نومبر 16:18

علما کرام کا جمعہ کے روز چھٹی کا مطالبہ
اسلام آباد (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔17 نومبر 2018ء) علما کرام نے جمعہ کے روز چھٹی کا مطالبہ کیا تھا اور اب صدر مملک بھی اس کی حمایت میں بول پڑے ہیں۔میڈیا رپورٹس کے مطابق صدر مملکت عارف علوی نے بھی علما کرام کے مطالبے کی حمایت کر دی۔صدر عارف علوی کا کہنا ہے کہ جمعہ کے روز چھٹی کا مطالبہ جائز ہے۔خیال رہے کچھ روز علما کرام کی طرف سے جمعہ کے روز چھٹی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

وفاقی وزیر مذہبی امور نور الحق قادری کی زیر صدارت لاہور میں منعقد ہونے والے ایک اجلاس میں قومی علما ء مشائخ کونسل کے اعلامیہ میں کہا گیا تھا کہ سود کی ممانعت، جمعہ کی تعطیل کی بحالی اور تعزیرات پاکستان میں 295 سی کو بالکل نہیں چھیڑا جائے گا۔ قومی علماء و مشائخ کونسل کا اجلاس لاہور کے مقامی ہوٹل میں ہوا ۔

(جاری ہے)

اجلاس میں ملک کے طول و عرض سے کونسل کے اراکین علما کرام اور مشائخ نے شرکت کی۔

وفاقی وزیر نے اجلاس کے شرکا کو یقین دلوایا کہ حکومت قومی علما مشائخ کونسل کی سفارشات پر بھرپور عمل کرے گی، تمام مسالک کے نمائندگان پر مبنی وفد وزارت کی زیر نگرانی مدارس دینیہ کا دورہ کرے گا۔ قومی علماء و مشائخ کونسل کی جانب سے جاری کیے جانے والے اعلامیہ کے دیگر نکات میں صوبائی اور ضلعی سطھ پر علما مشائخ کونسل اور متحدہ علما بورڈ کے قیام کے لیے پُرزور سفارش کی ۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق وفاقی وزیر اس سلسلے میں عنقریب صوبہ جات کے ذمہ داران سے ملاقات کریں گے۔ کونسل کے سالانہ 3 یا 4 اجلاس مختلف شہروں میں منعقد کیے جائیں۔ کونسل نے حکومت کے ملکی سطح پر شجرکاری مہم کی تائید کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا کہ علماء و مشائخ کونسل اپنے اپنے حلقہ اثر میں اس مہم کا آغاز کرے گی۔ قومی علما مشائخ کونسل کو قانونی حیثیت دی جائے ، غیر مسلموں کے لیے آئین و قانون میں مینارٹی کا لفظ حذف کر کے غیر مسلم کا لفظ استعمال کیا جائے۔ پیغامپاکستان کی عوامی سطح پر بھرپور اشاعت کی جائے۔ امتناع ربا اور جمعہ کی تعطیل کی کوشش کی جائے اور تعزیرات پاکستان میں 295 سی کو بالکل نہ چھیڑا جائے۔