نیب کی زلفی بخاری کا نام ای سی ایل سے ہٹانے کی مخالفت

نیب نے اسلام آباد ہائیکورٹ میں جواب جمع کرا دیا، زلفی بخاری کی درخواست پرعدالت میں کل کیس کی سماعت ہوگی

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ پیر نومبر 00:29

نیب کی زلفی بخاری کا نام ای سی ایل سے ہٹانے کی مخالفت
لاہور(اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔18 نومبر 2018ء) نیب نے وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری کا نام ای سی ایل سے ہٹانے کی مخالفت کردی،نیب کی طرف سے اسلام آباد ہائیکورٹ میں جواب جمع کرا دیا گیا، عدالت میں کل زلفی بخاری کی درخواست پر کیس کی سماعت ہوگی۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری کا نام ای سی ایل سے نکالنے کیلئے اسلام آباد ہائیکورٹ میں درخواست کی سماعت آج ہوگی۔

زلفی بخاری نے ای سی ایل سے نام نکلوانے کیلئے اسلام آباد ہائیکورٹ میں درخواست دے رکھی ہے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نے زلفی بخاری کی درخواست پرنیب سے جواب طلب کیا تھا۔ واضح رہے نیب نے زلفی بخاری کا نام آف شور کمپنی ظاہر ہونے پر ای سی ایل میں ڈالنے کی سفارش کی تھی۔ جس پر نگراں حکومت نے زلفی بخاری کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا تھا۔

(جاری ہے)

تاہم اب زلفی بخاری نے نام ای سی ایل سے نکالنے کیلئے اسلام آباد ہائیکورٹ میں درخواست دائر کر رکھی ہے۔

نیب نے وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری کا نام ای سی ایل سے ہٹانے کی مخالفت کردی ہے۔ دوسری جانب انہوں نے گزشتہ روز ایک سوال پر رپورٹر سے تلخی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ کس قانون کے تحت استعفیٰ دوں۔ سوال کسی طریقے سے پوچھا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ جو بھی حکم جاری کرے گی اس پر عملدرآمد کیا جائے گا۔ انہوں نے وزیراعظم کے یوٹرن کے سوال پر کہا کہ یوٹرن کا مطلب تصحیح کرنا ہوتا ہے حالات کے مطابق فیصلے بدلتے رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ کرپشن کوختم کیا جائے۔ میرے محکمے میں پہلے ہی بہت کرپشن ہے۔ ممبرکسی بھی پارٹی کا ہو ہمیں کام دے غرض ہے۔ 5 سالوں میں عوام کو فلاحی ریاست بناکردیں گے۔ انہوں نے کہا کہ عمر ے پر گیا توتنقید شروع ہوگئی اب پھر تنقید کی جارہی ہے۔