حکومت کے غیرآئنی اقدام کی سینیٹ میں مخالفت کریں گے،پیپلزپارٹی

حکومت کو واضح بتا دیں کہ سینیٹ میں اپوزیشن کی بھرپور قوت ہے، ہنگامی حالات میں آرڈیننس صرف 120 دن کے لیے ہوتا ہے،عدالتوں نے بھی کہا کہ صرف صدارتی آرڈیننس سے آپ کام نہیں کرسکتے۔پیپلزپارٹی کے رہنماء شیری رحمان، نیئر بخاری اور فرحت اللہ بابرکی مشترکہ پریس کانفرنس

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ جمعرات دسمبر 13:43

حکومت کے غیرآئنی اقدام کی سینیٹ میں مخالفت کریں گے،پیپلزپارٹی
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔06 دسمبر 2018ء) حکومت کے غیرآئنی اقدام کی سینیٹ میں مخالفت کریں گے،حکومت کو واضح بتا دیں کہ سینیٹ میں اپوزیشن کی بھرپور قوت ہے، ہنگامی حالات میں آرڈیننس صرف 120 دن کے لیے ہوتا ہے،عدالتوں نے بھی کہا کہ صرف صدارتی آرڈیننس سے آپ کام نہیں کرسکتے۔ پیپلزپارٹی کے رہنماء شیری رحمان، نیئر بخاری اور فرحت اللہ بابر آج یہاں مشترکہ پریس کانفرنس کررہے تھے۔

شیری رحمان نے کہا کہ ہم نے گزارش کی تھی کہ پارلیمان کے ذریعے ملک کو چلائیں۔ لیکن پی ٹی آئی حکومت نے پارلیمنٹ کو مفلوج کردیا۔ حکومت کے اقدامات آمریت کی طرزپر جارہے ہیں۔ احتساب کے لبادے میں آمرانہ طرز پر اپوزیشن کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔شیری رحمان نے کہا کہ عدالتوں نے بھی کہا کہ صرف صدارتی آرڈیننس سے آپ کام نہیں کرسکتے۔

(جاری ہے)

حکومت کو واضح بتا دیں کہ سینیٹ میں اپوزیشن کی بھرپور قوت ہے۔

حکومت کے کسی بھی غیرآئینی اقدام کا سینیٹ میں بھرپور ردعمل دیں گے۔انہوں نے کہا کہ ہنگامی حالات میں آرڈیننس صرف 120 دن کے لیے ہوتا ہے۔ عدالتوں نے بھی کہا کہ صرف صدارتی آرڈیننس سے آپ کام نہیں کرسکتے۔ انہوں نے کہا کہ
عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں کمی کا فائدہ عوام کو نہیں پہنچایا گیا۔ دوست ممالک سے کن شرائط پر پیسا لے رہے ہیں حکومت پارلیممنٹ کو آگاہ کرے۔

حکومتی تضادات سامنے آرہے ہیں۔ وزیر کہتے ہیں ہمیں ڈالر بڑھنے کا علم تھا۔ وزیراعظم کہتے ہیں میڈیا سے پتا چلا۔ پی ٹی آئی کے100دنوں میں ڈالرکی قیمت2 باربڑھی۔100دن میں دیواریں گرانے،بھینسیں،مرغی اورانڈوں کی بات ہوئی۔ نیئر بخاری نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں موجودہ حکومت کی عقل پرتالے پڑے ہوئے ہیں۔ اس موقع پرفرحت اللہ بابر نے کہا کہ انتخابات میں دھاندلی سےمتعلق نئےانکشافات سامنےآئے۔ 4ہزار فارمز پر دستخط تھے لیکن وہ دستخط کسی جناتی مخلوق کے تھے۔