سکھر:بچل شاہ کے مکین جتوئی برادری کا 105ویں روز بھی احتجاجی دھرنا جاری

پی پی شہید بھٹو کے صوبائی رہنمائوں سمیت مختلف سیاسی و سماجی شخصیات اظہار یکجہتی کیلئے کیمپ پر پہنچ گئی ،متاثرین سے اظہار ہمدردی ، قتل میں ملوث ملزمان کی گرفتاری کیلئے نعرے بازی ، بالا حکام واقعہ کا نوٹس لیکر ورثاء کو انصاف و تحفظ فراہم کریں ، رہنمائوں کا دھرنے سے خطاب

جمعرات دسمبر 22:54

سکھر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 13 دسمبر2018ء) بچل شاہ کے مکین جتوئی برادری کا 105ویں روز بھی احتجاجی دھرنا جاری ، پی پی شہید بھٹو کے صوبائی رہنمائوں سمیت مختلف سیاسی و سماجی شخصیات اظہار یکجہتی کیلئے کیمپ پر پہنچ گئی ،متاثرین سے اظہار ہمدردی ، قتل میں ملوث ملزمان کی گرفتاری کیلئے نعرے بازی ، بالا حکام واقعہ کا نوٹس لیکر ورثاء کو انصاف و تحفظ فراہم کریں ، رہنمائوں کا دھرنے سے خطاب ، تفصیلات کے مطابق سکھر کے علاقے بچل شاہ میانی میں پلاٹ پر قبضہ کر کے نوجوان جوان جتوئی کو قتل اور چھ افراد کو گولیاں مار کر شدید زخمی کرنے والے عمل میں ملوث جوابداروں لینڈ مافیا بلڈرراؤشاکر ،غفار راجپوت ،مہیر جتوئی، عیسی ملک،ایوب سیلرو،پناہ لبانو دیگر کی عدم گرفتاری کے خلاف سکھر پریس کلب کے سامنے جتوئی برادری کے افراد اور مظاہرین سے اظہار یکجہتی کیلئے پی پی شہید بھٹو کے کارکنان کی بڑی تعداد نے گذشتہ 8 ماہ سے انصاف نہ ملنے پر پریس کلب کے سامنے احتجاجی دھرنا جاری رکھا۔

(جاری ہے)

بھوک ہڑتالی کیمپ کی قیادت پی پی شہید بھٹو سندھ کے صدر تاج محمد ڈومکی ،نیک محمد کورائی ، گھوٹکی کے آرگنائیزر عبدالحیٰ ساوند، خیرپور کے رہنما ، مخدوم شفیع محمد ، ضمیر سولنگی ، جاوید نوحانی، سراج میرانی،سندھ شہری اتحاد کے چئیرمین مولانا عبید اللہ بھٹو ابن آزاد،جتوئی برادری کے معززین دلمراد جتوئی ، محمد عیدن ،جتوئی یاسین جتوئی، حماد اللہ جتوئی،شاھنواز جتوئی ، حسن جتوئی ، شہزادو جتوئی فیض اللہ و دیگر نے کی اس موقع پر مظاہرین اور پی پی شہید بھٹو صوبہ سندھ کے صدر تاج محمد ڈومکی کا کہنا تھاکے 8 ماہ گذر چکے ہیں جتوئی برادری کے متاثرین انصاف کے لیئے دربدر ہے ہیں لیکن انتہائی افسوس کیساتھ کہنا پڑتا ہے کہ ابتک پولیس قتل میں ملوث جوابداروں کو گرفتار کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہے واقعہ کیس پر معزز عدالت نے ملوث ملزمان کی گرفتاری کے وارنٹ بھی جاری کر رکھے ہیں لیکن پولیس قاتلوں کو گرفتار نہیں کر سکی ہے ملزمان سر عام پولیس پروٹوکول میں گھوم رہے ہیں اور متاثرین کو کیس سے دستبردار ہونے کے لئے سنگین نتائج کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے رہنماؤں کا مزید کہنا تھا کہ بااثر بلڈر را? شاکر نے پلاٹوں پر قبضہ کرکے مکینوں پر ظلم کے پہاڑ توڑ رکھے ہیں لیکن اسکے خلاف شکایت کے باوجود کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی جاتی ہے۔

مظاہرین نے آئی جی سندہ پولیس ،ڈی جی رینجرس، آرمی چیف، چیف جسٹس آف سپریم پاکستان سمیت دیگر بالا حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ہمیں انصاف و تحفظ فراہم کیا جائے بصورت دیگر انصاف کی عدم فراہمی تک ہمارا احتجاج جاری رہے گا۔#