پاکستان اور بھارت کے درمیان آبی تنازعات کےحل میں بڑی پیشرفت

بھارت انڈس واٹر ٹریٹی تنازع حل کرنے پرآمادہ، بھارت کی پاکستان کو چناب بیسن میں پن بجلی منصوبوں کے معائنے کی اجازت، پاکستانی معائنہ ٹیم 27 جنوری سے یکم فروری تک منصوبوں کا معائنہ کرے گی، وفاقی وزیرآبی وسائل فیصل واوڈا

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ جمعہ جنوری 16:51

پاکستان اور بھارت کے درمیان آبی تنازعات کےحل میں بڑی پیشرفت
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 جنوری2019ء) پاکستان اور بھارت کے درمیان آبی تنازعات کے حل میں بڑی پیشرفت ہوئی ہے، بھارت نے پاکستان کی چناب بیسن میں پن بجلی منصوبوں کے معائنے کی درخواست منظور کرلی ہے، پاکستانی معائنہ ٹیم 27 جنوری سے یکم فروری تک منصوبوں کا معائنہ کرے گی۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارت نے انڈس واٹر ٹریٹی تنازع حل کرنے پرآمادگی ظاہر کردی۔

بھارت نے پاکستان کی درخواست پر چناب بیسن میں منصوبوں کے معائنے کی اجازت دے دی ہے۔ وفاقی وزیرآبی وسائل فیصل واوڈا نے کہا کہ بطور وفاقی وزیراپنی 3 رکنی ٹیم کو معائنے کیلئے جانے کی ہدایت کردی ہے۔ بھارت جانے والے وفد کی قیادت انڈس واٹرکمشنرکریں گے۔ پاکستانی معائنہ ٹیم 27 جنوری سے یکم فروری تک منصوبوں کا معائنہ کرے گی۔

(جاری ہے)

وفاقی وزیرآبی وسائل فیصل واوڈا کا کہنا ہے کہ بھارت نے دریائے چناب کے بیسن میں بجلی منصوبوں کے معائنے کیلئے پاکستان کی درخواست منظور کرلی ہے۔

بھارت کیا اس اقدام کا خیرمقدم کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ امید ہے بھارت دیگر حل طلب مسائل پر بھی بات چیت کیلئے آمادہ ہوجائے گا۔ واضح رہے پاکستان کی ٹیم نے آخری بار ستمبر2014ء میں پن بجلی منصوبوں کا معائنہ کیا تھا۔ وفد مقبوضہ کشمیر میں متنازع پن بجلی منصوبوں کا معائنہ کرے گا۔مقبوضہ کشمیر میں دریائے چناب کے بیسن میں بھارت کے رتلے اور کلنائی ڈیم متنازع منصوبے ہیں۔پاکستان نے متعدد بار بھارت کو خبردار کیا کہ بھارت پاکستانی دریاؤں پر پن بجلی کے منصوبے بنا رہا ہے۔ان منصوبوں میں بڑی بڑی سرنگیں بھی شامل میں ہیں۔ جن کے ذریعے بھارت پاکستان کا پانی اپنی طرف منتقل کررہا ہے۔ تاہم بھارت مسلسل پاکستان کے تحفظات کودور کرنے کی بجائے ڈھٹائی کا مظاہرہ کرتا آرہا ہے۔