صوبے کے 12 مختلف اضلاع سے 171 یتیم بچوں کو زمونگ کور پشاور میں جلد سے جلد شفٹ کیا جائے گا،محمودخان

زمونگ کور پشاور میں ان یتیم بچوں کو ہر قسم کی سہولیات فراہم کی جائیں گی اور خصوصاً ان کی تعلیم اور خوراک پر فوکس کیا جائیگا پناگاہوں کی توسیع کے علاوہ زمونگ کور منصوبے کی بھی دوسرے اضلاع تک توسیع بہت جلد ممکن بنائی جائے گی،وزیراعلی خیبرپختونخوا

ہفتہ جنوری 18:50

صوبے کے 12 مختلف اضلاع سے 171 یتیم بچوں کو زمونگ کور پشاور میں جلد سے جلد ..
پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 جنوری2019ء) وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کہا ہے کہ صوبے کے 12 مختلف اضلاع سے 171 یتیم بچوں کو زمونگ کور پشاور میں جلد سے جلد شفٹ کیا جائے گا۔ انہوںنے کہاکہ زمونگ کور پشاور میں ان یتیم بچوں کو ہر قسم کی سہولیات فراہم کی جائیں گی اور خصوصاً ان کی تعلیم اور خوراک پر فوکس کیا جائے گا ۔انہوںنے کہاکہ پناگاہوں کی توسیع کے علاوہ زمونگ کور منصوبے کی بھی دوسرے اضلاع تک توسیع بہت جلد ممکن بنائی جائے گی۔

وزیراعلیٰ نے کہاکہ زمونگ کور منصوبے پر صوبائی حکومت کام کر رہی ہے تاکہ اس کو ایک ادارے کی شکل دی جائے ۔ انہوںنے کہاکہ صوبائی حکومت یتیم اور بے سہارا لوگوں خصوصاً یتیم بچوں کیلئے تمام تر سہولیات ممکن بنائے گی ۔ ان خیالات کا اظہار انہوںنے وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں خپل کور فائونڈیشن سوات کے حوالے سے منعقدہ ایک اجلاس کی صدارت کر تے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

وزیراطلاعات شوکت علی یوسفزئی، ایم این اے شاد محمد، صوبائی حکومت کے ترجمان اجمل خان وزیر، ایس ایس یو کے ہیڈصاحبزادہ سعید،سیکرٹری سوشل ویلفیئر ، وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری محمد اسرارخان، ڈائریکٹر خپل کور فائونڈیشن سوات محمد علی شاہ، خپل کورفائونڈیشن کے دیگر اراکین اور انتظامی سیکرٹریوں نے اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس میں وزیراعلیٰ کو خپل کور فائونڈیشن سوات کے قیام، اس کے طریقہ کار اور سوات میں یتیم بچوں کی خدمات کے حوالے سے تفصیلی بریفینگ دی گئی ۔

ڈائریکٹر خپل کور فائونڈیشن نے اجلاس کو بتایا کہ فائونڈیشن میں 3404 یتیم طلباء زیر تعلیم ہیں اور ادارہ ان میں مستحق یتیم بچوں کو دو ہزار روپے ماہانہ بھی دیتا ہے۔ اجلاس نے وزیراعلیٰ کو فائونڈیشن کے انتظامی ڈھانچہ کے بارے میں بریفینگ دی گئی اور سوات میں 100 یتیم بچوں کیلئے خپل کور ویلج( گل کدہ سوات )کے مقام پر قیام کے بارے میں آگاہ کیا گیا ۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ خپل کور فائونڈیشن کو چترال، دیر اپر اور دیر لوئر میں بھی توسیع دی جائے گی ۔ اجلاس نے حکومت سے خپل کور ویلج کے قیام اور ادارے کے دیگر فلاحی کاموں میں مدد کی اپیل کی ۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ نے خپل کور فائونڈیشن سوات کے حکام کواس فلاحی کام کی انجام دہی پر سراہا۔ انہوںنے کہاکہ تحریک انصاف کا وژن بھی ہے کہ کمزور اور بے سہار الوگوں کو اوپر لائے۔

انہوںنے کہاکہ ہماری حکومت اس طرح کے فلاحی اداروں کیلئے ہر ممکن مدد کرے گی ۔ انہوںنے کہاکہ یہی حب الوطنی ہے اور اس طرح کے فلاحی کاموں سے ہی عظیم قومیں بنتی ہیں۔ انہوںنے کہاکہ اس طرح یتیموں کی خدمت سے معاشرہ انصاف کی فراہمی کی طرف بڑھتا ہے اور اس میں آخرت کی کامیابی بھی ہے۔ انہوںنے کہاکہ خپل کور فائونڈیشن کے حکام کے ساتھ مل بیٹھ کر پشاور میں زمونگ کور منصوبے کو بھی مزید بہتر اور ایک ادارے کی طرز پر بنایا جائے گا۔

انہوںنے ڈائریکٹر خپل کور فائونڈیشن سوات کو اس طرح کے فلاحی کاموں پر بہت سراہا۔ وزیراعلیٰ نے عندیہ دیا کہ خپل کور ویلج فیزII کے سنگ بنیاد کیلئے وہ خود آئیں گے اور اپنے ہاتھوں سے اس کا افتتاح ممکن بنائیں گے ۔ اجلاس نے وزیراعلیٰ کو لاچی درخت کی زیادہ پلانٹیشن کی وجہ سے پانی کی کمی کے حوالے سے بھی بتایا اورکہا کہ مستقبل میںایسے پودوں کے لگانے سے پانی کی کمی لاحق ہو سکتی ہے۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ اس مسئلے پر متعلقہ محکمے سے مکمل اور تفصیلی رپورٹ طلب کرنے کے بعد لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔اجلاس میں وزیراعلیٰ نے کہاکہ صوبائی حکومت خپل کور فائونڈیشن سوات کو ہر ممکن مدد فراہم کرے گی۔ انہوںنے کہا کہ صوبائی حکومت پہلے سے یتیم اور بے سہار ابچوں کیلئے اقدامات اُٹھا چکی ہے اور مزید اقدامات اُٹھائے گی ۔ انہوںنے کہاکہ پناہ گاہوں کے ساتھ ساتھ زمونگ کور منصوبے کو بھی دیگر اضلاع تک توسیع دی جائے گی تاکہ صوبے کے دیگر اضلاع میں بھی بے سہارا اور یتیم بچوں کو تعلیم اور صحت کے بہتر مواقع میسر آئیں۔