مارک اپ کی شرح میں اضافے پر اظہار تشویش ،صنعتوں کیلئے سستے سرمائے کی فراہمی میں رکاوٹ آئیگی ‘لاہور چیمبر

نئی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کرنے، کاروباری شعبے میں استحکام لانے کیلئے مارک اپ ریٹ سنگل ڈیجٹ میں ہونا ضروری ہے

ہفتہ فروری 15:20

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 02 فروری2019ء) لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سینئر نائب صدر خواجہ شہزاد ناصر اور نائب صدر فہیم الرحمن سہگل نے سٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے مارک اپ کی شرح کم کرنے کے بجائے اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے صنعتوں کے لیے سستے سرمائے کی فراہمی میں رکاوٹ آئے گی ۔ ایک بیان میں لاہور چیمبر کے عہدیداروں نے کہا کہ نئی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کرنے، کاروباری شعبے میں استحکام لانے اور تجارتی و معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لیے مارک اپ ریٹ سنگل ڈیجٹ میں ہونا ضروری ہے لیکن اسے کم کرنے کے بجائے مزید بڑھادیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ صنعت سازی کا عمل تیز اور روزگار کے نئے مواقع پیدا کرنے کے لیے صنعتی شعبے کو سستے قرضوں کی فراہمی بہت ضروری ہے ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ پیداواری لاگت میں اضافے کی وجہ سے صنعتیں مسائل سے دوچار ہیں ۔انہوں نے کہا کہ وقت نے یہ ثابت کیا ہے کہ مارک اپ کی زیادہ شرح کی وجہ سے معیشت کو نقصان ہوا ہے اور اگر زمینی حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے اقدامات نہ اٹھائے گئے تو نہ صرف صنعت اور معیشت کے مسائل مزید بڑھیں گے بلکہ مالی خسارہ بھی بڑھے گا جو کسی طرح بھی ملک کے مفاد میں نہیں۔ انہوں نے کہا کہ سٹیٹ بینک آف پاکستان زمینی حقائق کو مدّنظر رکھتے ہوئے مارک اپ کی شرح فورا سنگل ڈیجٹ کرے۔

متعلقہ عنوان :