رؤف کلاسرا اور عامر متین مجھے زہر لگتے ہیں۔ فواد چوہدری

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے حکومت پر تنقید کرنے کی وجہ سے سینئیر تجزیہ نگاروں پر ہنسی مذاق میں میٹھی میٹھی تنقید کر ڈالی

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان پیر فروری 14:50

رؤف کلاسرا اور عامر متین مجھے زہر لگتے ہیں۔ فواد چوہدری
اسلام آباد (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار-11 فروری 2019ء) : وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ عامر متین اور رؤف کلاسرا جب حکومت پر تنقید کرتے ہیں تو زہر لگتے ہیں لیکن دوست ہیں پھر بندہ کچھ کہہ بھی نہیں سکتا۔تفصیلات کے مطابقسابق وزیراعظم عمران خان پاکستان کے 22 وزیراعظم منتخب ہوئے جس کے لیے انہوں نے 22سال کی طویل جدوجہد کی۔اس بات میں کوئی شک نہیں کہ عمران خان کے چاہنے والوں کی تعداد لاکھوں میں ہے۔

اور یہی وجہ ہے کہ وہ کئی سالوں سے عمران خان کی اس جدو جہد میں شامل تھے۔عمران خان کے چاہنے والوں نے ان کے ساتھ دھرنے دئیے اور ہر مشکل کا مقابلہ کیا۔ اس 22 سالہ جدوجہد میں عمران خان کے ساتھ ساتھ ان کے کارکنان نے بھی بے شمار مشکلات دیکھیں ۔اس سفر میں میڈیا اور سینئیر تجزیہ نگاروں نے بھی عمران خان کی خوب حمایت کی تاہم عمران خان کے اقتدار میں آنے کے بعدعمران خان کے یہی حمایتی اب کھل کر ان کی مخافت کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

انہی میں سینیئر تجزیہ نگار روؤ کلاسرا اور عامر متین بھی شامل ہیں جو کہ حکومت اور اپوزیشن پر ایسی تنقید کرتے ہیں جس کو سنتے ہی وہ آگ بگولا ہو جاتے ہیں۔نجی ٹی وی چینل کی سالگرہ کی تقریب کے دوران وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ جب ہم پہلے کام کر رہے ہوتے تھے تو حکومت پر تنقید کرنا اچھا لگتا تھا۔لیکن اب رؤف کلاسرا اور عامر متین جب حکومت پر تنقید کر رہے ہوتے ہیں تو زہر لگتے ہیں لیکن وہ ہمارے دوست بھی ہیں تو پھر ہم کچھ کہہ بھی نہیں سکتے۔

جب کہ وزیراعظم عمران خان کے مشیر افتخار درانی کا کہنا ہے کہ عامر متین اور رؤف کلاسرا کے پروگرام سے ہمیں رہنمائی ملتی رہتی ہے۔واضح رہے وزیر اعظم عمران خان نے نمل یونیورسٹی کے کانوکیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ جب سے سیاست میں آیا ہوں مجھے اپنی غلطیاں دیکھنے کی ضرورت ہی نہیں پڑتی روز روف کلاسرا بتا رہا ہوتا ہے کہ کتنی غلطیاں کیں۔