سعودی عرب نے سرکاری حج کوٹہ پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کر دیا

سعودیہ کی خواہش ہے تمام ممالک حج کے معاملات تین سے چار سال میں بتدریج نجی شعبے کو منتقل کریں، آئندہ چند برس میں حج مزید مہنگا اور نجی شعبے کے تحت ہی ممکن ہوسکے گا: وزیر مذہبی امور نور الحق قادری

muhammad ali محمد علی پیر فروری 22:05

سعودی عرب نے سرکاری حج کوٹہ پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کر دیا
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 فروری2019ء) سعودی عرب نے سرکاری حج کوٹہ پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کر دیا، وزیر مذہبی امور کے مطابق سعودیہ کی خواہش ہے تمام ممالک حج کے معاملات تین سے چار سال میں بتدریج نجی شعبے کو منتقل کریں، آئندہ چند برس میں حج مزید مہنگا اور نجی شعبے کے تحت ہی ممکن ہوسکے گا۔ تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر مذہبی امور نورالحق قادری نے کہا ہے کہ سعودی وزارت حج کی خواہش ہے کہ تمام ممالک حج کے معاملات تین سے چار سال میں بتدریج نجی شعبے کو منتقل کریں، آئندہ چند برس میں حج مزید مہنگا اور نجی شعبے کے تحت ہی ممکن ہوسکے گا،سعودی ولی عہد سے اخراجات میں کمی کا مطالبہ نہیں کریں گے۔

نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سعودی حکام چاہتے ہیں کہ حج مکمل نجی شعبے کے حوالے کیا جائے اور وہ مرحلہ وار حج نجی شعبے میں منتقل کرنے کا کہہ رہے ہیں اور ان کی حج پرائیویٹائز کرنے کی بات ماننا پڑے گی۔

(جاری ہے)

وزیر مذہبی امور نور الحق قادری نے کہا کہ مدینہ کی ریاست میں حج عمرہ مفت نہیں ہوتا، حج اخراجات میں اب کوئی تبدیلی نہیں ہوگی،حج سبسڈی کی سمری وفاقی کابینہ میں پیش کی گئی اور اس کے حق میں دلائل بھی دئیے تھے تاہم کابینہ نے حج سبسڈی پر اتفاق نہیں کیا۔

وفاقی وزیر مذہبی امور نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بدحال معیشت میں سبسڈی دینے پر ان کا دل نہیں مانتا، مسلم لیگ (ن)نے الیکشن کی وجہ سے سبسڈی دی تھی۔نورالحق قادری کا کہنا تھا کہ اسلامی نظریاتی کونسل نے سبسڈی کو جائز قرار دیا تھا لیکن انہوں نے مرحلہ وار سبسڈی ختم کرنے کی تجویز دی تھی۔انہوں نے کہا کہ سعودی حکومت نے دنیا بھر کے لیے حج اخراجات میں اضافہ کیا اور اسے اخراجات میں کمی کا نہیں کہیں گے، سعودی ولی عہد سے بھی اخراجات میں کمی کا مطالبہ نہیں کریں گے۔