ہائی کورٹ بارایسوسی ایشن کی مقبوضہ کشمیر میں نہتے شہریوںپربھارتی فورسز کے مظالم کی شدید مذمت

پیر اپریل 17:35

سرینگر۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 15 اپریل2019ء) مقبوضہ کشمیر میں ہائی کورٹ بارایسوسی ایشن نے شوپیان اوردیگر علاقوںمیں بھارتی فورسز کی طرف سے نہتے شہریوں کے خلاف گولیوںاور پیلٹ گنز کے وحشیانہ استعمال کی شدید مذمت کی ہے۔ کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق بار ایسوسی ایشن نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں سے اپیل کی کہ وہ مقبوضہ علاقے کے طول و عرض میں بھارتی فوجیوںکی طرف سے جاری مظالم کا سخت نوٹس لیں اور انہیں رکوانے کے لیے اپنا کردار اداکریں۔

ہفتے کے روز بھارتی فورسز نے ضلع شوپیان کے علاقے گیہند میں پرامن مظاہرین پر پیلٹ گنزکی فائرنگ سے دو درجن کے قریب شہریوںکو زخمی کر دیا تھا۔ چار شدید زخمیوںکو علاج معالجے کے لیے سرینگر کے ایس ایم ایچ ایس ہسپتال بھجوایاگیا تھا ۔

(جاری ہے)

فوجیوںنے جمعرات کو ضلع بارہمولہ کے علاقے رفیع آباد میں بھی دولڑکوںکو وحشیانہ تشدد کانشانہ بنایاتھا ۔

ادھر بھارتی فورسز نے اسلام آباد قصبے کے علاقے Shirporaمیں متعدد افراد کو تشدد کا نشانہ بنایا اور دکانوںکی لوٹ مار کی ۔ فوجیوںنے کولگام ، پلوامہ اور شوپیاںکے اضلاع میںتلاشی اور محاصرے کی کارروائیاں بھی کیں ۔ انہوںنے تمام داخلی اور خارجی راستے بند کر کے گھر گھرتلاشی کی کارروائیاں کیں۔حریت رہنماء مشتا ق الاسلام نے ایک بیان میں بھارتی قابض انتظامیہ کی طرف سے جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک کو تہاڑ جیل منتقل کرنے اور امیر جماعت اسلامی ڈاکٹر عبدالحمید فیاض ، جمعیت اہلحدیث کے نائب صدر مولانا مشتاق احمد ویری اور درجنوںدیگر نظربندوںکو ہریانہ اوردیگر بھارتی ریاستوں میںقید تنہائی میں رکھنے کی مذمت کی ۔

بھارتی تحقیقاتی ادارے این آئی اے نے کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سیدعلی گیلانی کے بڑے فرزند ڈاکٹر نعیم گیلانی کے نام ایک ہفتے میں دوسری مرتبہ سمن جاری کئے ہیں انہیںپوچھ گچھ کیلئے آئندہ ہفتے نئی دلی میں ادارے کے ہیڈ کوارٹر ز میں پیش ہونے کیلئے کہاگیاہے۔ دریںاثناء ضلع اسلام آباد کے علاقے سرہامہ میں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کی صدر محبوبہ مفتی کے قافلے پر پتھرائو کیاگیاہے۔اگرچہ وہ حملے میں محفوظ رہیں تاہم انکے قافلے میں شامل ایک گاڑی کو شدید نقصان پہنچا ہے ۔