عمران خان نے اسد عمر کو ملاقات کے لیے بلالیا

وزیرخزانہ کے بعد وزیرپٹرولیم کا استعفی تیار

Mian Nadeem میاں محمد ندیم جمعرات اپریل 17:50

عمران خان نے اسد عمر کو ملاقات کے لیے بلالیا
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔ 18 اپریل۔2019ء) وزیراعظم عمران خان نے اسدعمر کو وزیراعظم آفس طلب کر لیا ہے.تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم نے اسد عمر کو اپنے آفس میں طلب کیا ہے، وزیراعظم عمران خان اوراسد عمر کی ملاقات کچھ دیر میں ہوگی. اسد عمر کے بعد وزیر پیٹرولیم بھی استعفے کا اعلان کر دیں گے؟تفصیلات کے مطابق کابینہ میں مزید تبدیلیاں متوقع ہیں، ممکنہ طور پر آج رات یا کل صبح تک اہم اعلان ہوسکتے ہیں.ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے وزیر پٹرولیم غلام سرور کو وزیر اعظم آفس طلب کر لیا.وزیرپٹرولیم غلام سرورخان کچھ دیر میں وزیراعظم سے ملاقات کریں گے، سابق وزیر خزانہ اسد عمر کو بھی وزیر اعظم نے طلب کر رکھا ہے.

(جاری ہے)

موصولہ اطلاعات کے مطابق وزیراعظم وزیر پٹرولیم کوبھی عہدہ چھوڑنے کی ہدایت کر چکے ہیں، جس کا اعلان جلد متوقع ہے.ذرائع کے مطابق وزیرپٹرولیم، داخلہ سمیت چار مزید وزارتوں میں تبدیلی کا فیصلہ کیا گیا، وفاقی کابینہ کے ساتھ بیوروکریسی میں بھی تبدیلیوں کا فیصلہ کیا گیا ہے.ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے سابق وزیر خزانہ کو طلب کر لیا ہے، ملاقات جلد متوقع ہے.دوسری جانب وزیر خزانہ اسد عمر کی وزارت خزانہ چھوڑنے سے متعلق مصدقہ اطلاعات کے بعد پاکستان اسٹاک ایکسچینج 100 انڈیکس میں 145 پوائنٹس کی کمی واقع ہوگئی.

اسد عمر کے وزارت خزانہ چھوڑنے کے بعد پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں مندی چھا گئی، کاروبار کے دوران 100 انڈیکس میں 145 پوائنٹس کی کمی دیکھی گئی. کاروبار میں مندی کے بعد 100 انڈیکس 36 ہزار 600 پوائنٹس کی سطح سے نیچے آگیا. خیال رہے کہ رواں ہفتے کے آغاز پر اسٹاک مارکیٹ میں تیزی دیکھی گئی تھی، منگل کے روز 100 انڈیکس کی 37 ہزار 400 کی نفسیاتی حد بحال ہوگئی تھی.

تیزی کے نتیجے میں سرمایہ کاری مالیت میں 20 ارب 20 کروڑ روپے سے زائد کا اضافہ ہوا اور کاروباری حجم 9.16 فیصد کم ہوگیا، جبکہ 56.72 فیصد حصص کی قیمتوں میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا تھا‘دوران ٹریڈنگ 100 انڈیکس 37 ہزار 697 پوائنٹس کی بلند سطح پر بھی دیکھا گیا تھا. رواں ہفتے کے آغاز پر سرمایہ کاری مالیت میں 20 ارب 20 کروڑ 60 لاکھ 80 ہزار 556 روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا تھا جس کے نتیجے میں سرمایہ کاری کی مجموعی مالیت بڑھ کر 76 کھرب 61 ارب 91 کروڑ 40 لاکھ 33 ہزار 206 روپے ہوگئی تھی.